امریکی صدر کے خلابازوں کو چاند پر بھیجنے کے حکم نامہ پر دستخط

تصویر کے کاپی رائٹ AFP/Getty Images
Image caption چاند کا یہ سفر مریخ کے سفر کی بنیاد ہوگا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ناسا کو ہدایت کی ہے کہ وہ 1972 کے بعد پہلی مرتبہ انسانوں کا ایک مشن پھر سے چاند پر بھیجے۔

اس مشن میں طویل المدتی دریافتوں اور چاند کی سطح کے استعمال پر توجہ دی جائے گی۔

اس منصوبے میں نجی شعبے کے ساتھ اشتراک کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیے

’مجھے خلا میں کھٹکھٹانے کی آواز آئی‘

پیگی وِٹسن خلا میں جانے والی معمر ترین خاتون

چاند پر قدم رکھنے والا آخری انسان چل بسا

صدر ٹرمپ نے یہ بھی کہا کہ اس منصوبے سے مریخ تک جانے کے مشن کی بنیادیں مضبوط ہوں گی۔ تاہم انھوں نے چاند کے لیے اس مشن کے لیے وقت طے نہیں کیا۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اس منصوبے کے حوالے سے کوئی بھی حقیقی قدم اٹھانے کے لیے کانگرس کی منظوری درکار ہوگی۔

خلائی تحقیق کے حوالے سے دونوں ہی جماعتوں میں حمایت پائی جاتی ہے تاہم ان کی طوالت اور بجٹ پر اختلافِ رائے موجود ہے۔

اس سال کے آغاز میں چین نے بھی کہا تھا کہ وہ خلا بازوں کب چاند پر بھیجنے کی تیاری کر رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption حکم نامہ پر دستحظ کرتے ہوئے ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا امریکہ رہنما رہے گا

نئے حکم نامہ پر دستخط کی تقریب میں ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ’ہم رہنما ہیں اور ہم ہی رہنما رہیں گے۔‘

اس حکم نامہ کی تجویز نیشنل سپیس کونسل نے دی تھی جس کے سربراہ نائب صدر مائک پینس ہیں

تاہم ٹرمپ انتظامیہ نے یہ معلومات نہیں دیں کہ نئے مقاصد کیسے حاصل ہوں گے اور ان کے اوقاتِ کار کیا ہوں گے۔

ناسا کے قائم مقام منتظم رابرٹ لائٹ فوٹ نے اس اعلان کا خیر مقدم کیا ہے۔

ان کا ایک بیان میں کہنا تھا ’ناسا صدر کے چاند پر انسانوں کی واپسی کے سفر سے متعلق حکم نامہ کی حمایت کرتا ہے اور چاند اور مریخ کا سفر نظامِ شمسی کی وسعتوں کو کھولے گا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں