ٹائیگر کا عالمی دن: کیا دنیا میں شیروں کی آبادی پھر سے بڑھ رہی ہے؟

شیر تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سویڈن کے اُرسا بیون پارک میں سائبیرین ٹائگر کی اپنے حریف کے ساتھ مقابلے کے دوران غراتے ہوئے لمحے کی تصویر

29 جولائی کو دنیا بھر میں ’گلوبل ٹائگر ڈے‘ یعنی شیروں کا عالمی دن منایا جاتا ہے۔ اس دن کا مقصد دنیا میں گرتی ہوئی اور خطرے کا شکار شیروں کی آبادی کے بارے میں لوگوں کو آگاہ کرنا ہے۔ اسی مناسبت سے آج سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بھی #InternationalTigerDay ٹرینڈ کر رہا ہے۔

شیروں کا سائنسی نام ’پینتھرا ٹائگرس‘ ہے اور ان کا تعلق ممیلیا جانوروں سے ہے جو اپنے نو مولود کو دودھ پلاتے ہیں۔

یہ شیر استوائی، برساتی یا دلدلی جنگلات میں پائے جاتے ہیں۔ ان کی لمبائی چھ سے دس فٹ تک ہوتی ہے جبکہ ان کا وزن 75 سے 300 کلو گرام تک ہو سکتا ہے۔ یہ گوشت خور جانور ہیں اور ایک دن میں 40 گلو گرام تک گوشت کھا سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

سیلفی لیتے سائبیرین شیر

شیر، ٹائیگر اور کتے کی دوستی کے چرچے

شیر سے لڑائی: ’میں نے سوچا میری بیٹی مرنے والی ہے‘

دنیا میں نو میں سے چھ اقسام کے شیر رہ گئے ہیں جو روس سمیت جنوبی ایشیا اور جنوب مشرق ایشیا کے 13 ممالک میں پائے جاتے ہیں۔

شیر کے بچے تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کرائمیہ کے تائگان سفاری پارک میں نومولود بنگالی ٹائیگر کے بچے

عموماً یہ شیر تنہا رہتے ہیں اور اپنا شکار خود کرتے ہیں۔ یہ پیشاب اور پخانے یا غُرا کر اپنے علاقے کی حدود کا تعین کرتے ہیں۔

شیرنی ہر دو سالوں میں دو یا چار بچوں کو پیدا کرتی ہے جس میں سے عموماً نصف ہی بالغ ہو پاتے ہیں۔ دو سال کی عمر تک پہنچ کر بچے خود مختار ہو جاتے ہیں اور اپنی ماں سے علیحدہ ہو جاتے ہیں۔

اعداد و شمار

خطرے کے شکار جانوروں کی نگرانی اور تحفظ کرنے والی بین الاقوامی تنظیم ’ورلڈ وائلڈ لائف فنڈ‘ یا ڈبلیو ڈبلیو ایف کے مطابق 20ویں صدی کی ابتدا سے اب تک دنیا میں جنگلی شیروں کی 95 آبادی فیصد کم ہوئی ہے اور اب دنیا میں تقریباً 3900 جنگلی شیر باقی رہ گئے ہیں۔

خطرے میں ہونے کے باوجود مثبت بات یہ ہے کہ عالمی کوششوں کے نتیجے میں آہستہ آہستہ شیروں کی آبادی بڑھ رہی ہے۔

شیر تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption انڈیا کے بندھوو گڑھ نیشنل پارک میں اپنے پنجے تیز کرتا ہوا

ماہرین کے مطابق شیروں کی اکثریت انڈیا میں بستی ہے اور 20ویں صدی کی ابتدا میں یہ اندازہ لگایا گیا کہ انڈیا میں ایک لاکھ سے زیادہ شیر پائے جاتے تھے۔ لیکن اگلے 100 سالوں میں برطانوی افسروں اور انڈیا کے شاہی خاندانوں کے شکار کی وجہ سے ان کی تعداد بہت کم ہو گئی۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق عالمی شیروں کے دن کی مناسبت سے وزیر اعظم نریندر مودی نے انڈیا میں شیروں کی آبادی پر رپورٹ کی رونمائی کرتے ہوئے کہا کہ انڈیا دنیا میں شیروں کے لیے سب سے بڑا اور محفوظ مقام بن گیا ہے۔

ملک میں شیروں کی تعداد سنہ 2004 کے 1400 سے بڑھ کر اس سال 2977 ہو چکی ہے۔

اس موقع پر نریندر مودی کا کہنا تھا کہ ’نو سال پہلے سینٹ پیٹرزبرگ میں یہ فیصلہ ہوا تھا کہ 2022 تک شیروں کی آبادی دوگنی کرنی ہو گی لیکن انڈیا نے یہ حدف چار سال پہلے ہی پورا کر لیا۔‘

شیر تصویر کے کاپی رائٹ SOPA Images
Image caption شیروں کی ایک قسم امور ٹائیگر جسے سائنسی زبان میں ’پینتھیریا ٹگرس الٹیکا‘ کہا جاتا ہے

خطرات

شیروں کو سب سے زیادہ خطرہ غیر قانونی شکار اور تجارت سے ہے۔ شیروں کی کھال قیمتی ہے جبکہ ان کی ہڈیوں کا استعمال چین میں روایتی ادویات میں ہوتا ہے۔ ماحول کی تحفظ کی نجی تحقیقاتی ادارے ’انوائرمنیٹل انویسٹیگیشن ایجنسی‘ کا دعویٰ ہے کہ 5000 سے زیادہ شیر چین کے فارمز اور چڑیا گھروں میں موجود ہیں۔

شیر کی کھال تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ویتنام سے چین سمگل ہونے والی ایک کھال کی برآمدگی

اس کے علاوہ شیروں کی قدرتی آماج گاہوں میں انسانی سرگرمیوں کی وجہ سے کمی آئی ہے جس سے ان کی تعداد متاثر ہوئی ہے۔

وہ علاقے جہاں شیر پائے جاتے تھے وہاں انسانوں نے لکڑی ہے لیے درخت کاٹ دیے، سڑکیں بنا دیں اور فصلیں اگا لیں جس کی وجہ سے علاقے بٹ گئے اور کیونکہ شیر بڑے علاقوں میں اکیلے رہتے ہیں ان کے لیے ایسے چھوٹے علاقوں میں رہنا مشکل ہوتا ہے۔

دوسرے علاقوں سے کٹ جانے کی وجہ سے وجہ سے شیر اپنی ہی نسل اور خاندان کے اندر افزائش کرتے ہیں جس کی وجہ سے ان میں جینیاتی تنوع کم ہو جاتی ہے اور بیماریاں ایک نسل سے دوسری نسل میں منتقل ہو جاتی ہیں۔

شیر تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption چین کے سائبیرین ٹائیگر

جنگلات کی کمی کی وجہ سے شیر اکثر انسانوں کی آبادی میں بھی داخل ہو کر ان کے لیے اور ان کے مویشیوں کی جانوں کے لیے خطرہ بن جاتے ہیں جس کی وجہ سے انسان انھیں اپنے دفاع میں مار دیتے ہیں۔

شیر تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ماحولیاتی تبدیلی بھی شیروں کے لیے خطرناک ہے۔

انڈیا اور بنگلادیش کے درمیان ساحلی علاقوں پر پھیلے مینگروو کے جنگلات میں شیر رہتے ہیں، ڈبلیو ڈبلیو ایف کے مطابق 2017 تک ان ساحلوں میں ایک فٹ تک دریا کی سطح بڑھ جائے گی جس سے ان کا ماحول پوری طرح تباہ ہو جائے گا۔

پاکستان میں ٹائیگرز

آج پاکستان میں ٹائیگرز نہیں پائے جاتے لیکن بین الاقوامی اتحاد برائے تحفظ قدرت ’آئی سی یو این‘ کی ایک تحقیق کے مطابق 1906 میں پاکستان میں دیکھے گئے آخری ٹائیگر کو بہاولپور میں شکار کر کے مار دیا گیا تھا۔

تمام تصاویر کے جملہ حقوق محفوظ ہیں۔

اسی بارے میں