ایپل نے آئی فون 11 اور سیریز 5 واچ متعارف کروا دی

آئی فون 11 تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

مشہور ٹیکنالوجی کمپنی ایپل نے آئی فون 11 کے مختلف ماڈلز متعارف کروا دیے ہیں جن میں پہلے سے زیادہ کیمرے ہیں اور اس کا جدیدیت سے ہم آہنگ پروسیسر کم پاور استعمال کرتے ہوئے تیز رفتاری سے کام کرتا ہے۔

کمپنی کا کہنا ہے آئی فون 10 پرو کے دو نئے ماڈلز کی بیٹری پرانے ماڈلز کی نسبت چار سے پانچ گھنٹے زیادہ کام کرے گی۔

ایپل نے فائیو جی ماڈل لانچ نہیں کیا ہے جبکہ کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ چند دوسرے فیچر مسنگ ہیں۔ ایپل نے سمارٹ واچ کا نیا ورژن بھی متعارف کروایا ہے جس میں پہلی مرتبہ 'ہر وقت آن رہے والا' فیچر دیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

’ایپل انڈیا میں آئی فون تیار کرے گا‘

کیا موبائل فون واقعی خفیہ ریکارڈنگ کرتے ہیں؟

ایپل نے آئی فون کی قیمتوں میں کمی کا اشارہ دے دیا

سیریز فائیو واچ کے بارے میں کہا گیا ہے کہ اس کی بیٹری لائف 18 گھنٹے ہو گی۔

گھڑی میں کمپاس کا آپشن بھی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ ٹائٹینیم کیسنگ کا بھی۔ یہ گھڑی پہننے والے کو اس کے ارد گرد شور کا لیول خطرے کی حد تک بڑھنے کی صورت میں آگاہ بھی کرے گی۔

ایپل کا کہنا ہے کہ وہ آئی فون سیریز 3 ماڈل کو فی الحال مارکیٹ میں ہی رکھے گا اور اس کی قیمت 199 امریکی ڈالر کے لگ بھگ ہو گی۔

تجزیہ کار پیٹرک مورہیڈ کا کہنا ہے کہ 'مجھے ایپل کی صحت اور حفاظت سے متعلق صلاحیتوں کے فروغ سے پیار ہے مگر بتائے گئے فیچرز کو نہ دیکھ کر میں مایوس ہوا ہوں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ APPLE
Image caption سیریز فائیو واچ کے بارے میں کہا گیا ہے کہ اس کی بیٹری لائف 18 گھنٹے ہو گی

ریسرچ فرم آئی ڈی سی کے مطابق ایپل کا اس وقت عالمی سمارٹ واچ مارکیٹ میں حصہ 49 فیصد ہے۔

کیمرے کی خصوصیات

نئے آئی فون ماڈلز میں قابل ذکر چیز 'الٹرا وائیڈ' ریئر کیمرا ہے جس کا آپٹیکل زوم دو سو فیصد ہے۔

پرو ماڈلز میں ٹیلی فوٹو اور نارمل لینزز کو برقرار رکھا گیا ہے جبکہ کہ آئی فون 11 میں صرف ایک الٹرا وائیڈ لینز اور سٹینڈرڈ لینز ہے۔

ایپل نے نیا نائٹ موڈ فیچر بھی متعارف کروایا ہے جو تصویر کو ضرورت پڑنے پر زیادہ روشن کر دیتا ہے جبکہ ایسے کرتے ہوئے پیدا ہونے والے ڈیجیٹل شور کو کم کرنے کے صلاحیت بھی ہو گی۔ اس سے قبل گوگل، سیم سنگ اور ہواوئے اپنے ہینڈ سیٹس میں پہلے ہی اس سے ملتے جلتے فیچرز متعارف کروا چکے ہیں۔

ڈیپ فیوژن نامی ایک نئی سہولت بھی دی گئی ہے۔ یہ بیک وقت نو تصاویر لے کر ان کو پکسل بائی پکسل جوڑتے ہوئے بہترین تصویر دینے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ ابتدا میں یہ سہولت دستیاب نہیں ہو گی تاہم سال کے اختتام سے قبل ایک سافٹ ویئر کے ذریعے اسے میسر کر دیا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ APPLE
Image caption مشہور ٹیکنالوجی کمپنی اپیل نے آئی فون 11 کے مختلف ماڈلز متعارف کروا دیے ہیں

دیگر نئی سہولیات میں فرنٹ کیمرا کے ساتھ سلو موشن ویڈیوز شوٹ کرنے کی صلاحیت بھی شامل ہے۔ ہینڈ سیٹس کا پروسیسر بھی اپ گریڈ کیا گیا ہے۔

ایپل نے کہنا ہے کہ اس کا سینٹرل پروسیسنگ یونٹ اور گرافک پروسیسنگ یونٹ اینڈرائڈ فونز کے مقابلے میں زیادہ طاقت ور ہیں۔ اسی طرح اعدادوشمار کے بہتر حساب کتاب کے لیے چپ کو بہتر کیا گیا ہے۔

آئی فون 11 اس سے پہلے آنے والے ایکس آر سے کچھ سستا ہے اور برطانیہ میں اس کی قیمت 729 پاؤنڈ سے لے کر 879 پاؤنڈ تک ہو گی۔ آئی فون 11 کے پرو ماڈلز اس سے پیشتر آنے والے ایکس ایس سے زیادہ مہنگے ہیں اور ان کی قیمت 1049 پاؤنڈ سے 1499 پاؤنڈز تک ہو گیا۔

یہ تمام ماڈلز آئندہ دس روز کے اندر مارکیٹ میں فروخت کے لیے دستیاب ہوں گے۔

اسی بارے میں