امید پرست عورتوں کی’لمبی عمریں‘

خواتین
Image caption خوش رہنے والی خواتین میں دل کے امراض کم پائے گئے

ایک امریکی مطالعے میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ ہمیشہ پُر امید رہنے کا رحجان رکھنے والی خواتین کو دل کی بیماریوں کا خطرہ کم ہوتا ہے اور ان کی عمریں بھی لمبی ہوتی ہیں۔

امریکی محققین کا یہ مطالعہ اس سے پہلے کی جانے والی جرمن محققین کی اس تحقیق کی توثیق کرتا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ امید پرستی مردوں میں دل کے امراض کا خطرہ کم کر دیتی ہے۔

اس تحقیق میں تقریباً ایک لاکھ خواتین کو شریک کیا گیا جس سے یہ انکشاف ہوا ہے کہ جو خواتین مایوس ہونے، اداس رہنے یا یاسیت پسندی کا رحجان رکھتی ہیں انہیں بلند فشار خون اور کلسٹرول کی سطح اونچی رہنے کے عارضے ہوتے ہیں۔

محققین کا کہنا ہے کہ اگر صرف انہیں عوامل کو پیش رکھا جائے تو بھی محض رویے کی تبدیلی خطرات کے امکانات میں کمی بیشی کر سکتی ہے۔

رجائیت پسند یا ہر حال میں مطمئن رہنے والی خواتین میں دل کی بیماریوں کا خطرہ نو فیصد کم ہوتا ہے جب کہ ان اسباب سے ان کی اموات کے امکانات چودہ فیصد کم ہوتے ہیں اور علاج کی صورت میں انہیں جینے کے لیے آٹھ سال زیادہ مل سکتے ہیں۔

اس جائزے کے مطابق وہ خواتین جو دوسروں کے بارے میں معاندانہ سوچ کا شکار ہوتی ہیں اور بالعموم دوسروں کے بارے میں بے اعتباری کا شکار رہتی ہیں ان میں جلد موت کی شرح دوسری خواتین کے برخلاف سولہ فیصد زیادہ ہوتی ہے۔

ایک اور پہلو یہ نوٹ کیا گیا ہے کہ امید پرست خواتین میں بیماریوں کے مقابلے کا رحجان زیادہ ہوتا ہے اور وہ بیماری کی صورت میں اپنے علاج پر زیادہ توجہ دیتی ہیں اور اپنا زیادہ خیال رکھتی ہیں۔

اس کے علاوہ امید پرست خواتین میں ورزش کرنے کا رحجان زیادہ ہوتا ہے اور وہ نسبتاً دبلی بھی ہوتی ہیں۔

اسی بارے میں