’جلد کے کینسر سے ہلاکتوں میں اضافہ‘

برطانوی ادارے کینسر ریسرچ یو کے کے مطابق ملک میں جلد کے کینسر کی وجہ سے ہلاک ہونے والے مردوں کی تعداد گزشتہ تین دہائیوں میں دوگنی ہوگئی ہے۔

اعدادوشمار کے مطابق ستّر کی دہائی کے اواخر میں میلانوما سے مرنے والوں کی تعداد چار سو کے لگ بھگ تھی لیکن اب گیارہ سو افراد اس کینسر سے مرتے ہیں۔

ان اعدادوشمار کے تحت برطانوی مردوں میں جلد کے کینسر سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد ایک لاکھ افراد میں سے ایک اعشاریہ پانچ کے تناسب سے بڑھ کر تین اعشاریہ ایک تک پہنچ گئی ہے۔

ادارے کے مطابق دھوپ سے محفوظ رہ کر اور مسّوں کا خیال رکھ کر جلد کے کینسر سے بچا جا سکتا ہے۔ برطانوی خواتین میں بھی جلد کے کینسر سے شرحِ اموات ایک لاکھ میں ایک اعشاریہ پانچ سے بڑھ کر دو اعشاریہ دو ہوگئی ہے۔

کینسر ریسرچ کے مطابق اگرچہ جلد کے کینسر میں خواتین زیادہ مبتلا ہوتی ہیں تاہم اس سے مرنے والوں کی تعداد مردوں کی زیادہ ہے۔ برطانیہ میں پینسٹھ برس سے زائد العمر افراد میں جلد کے کینسر سے ہلاک ہونے کی شرح ایک لاکھ افراد میں ساڑھے چار سے بڑھ کر پندرہ اعشاریہ دو ہوگئی ہے۔

کینسر ریسرچ یو کے کی کیرولین سرنی کے مطابق مردوں کو اپنی جلد کا خیال رکھنا چاہیے۔ان کا کہنا ہے کہ اکثر مرد اپنی جلد کے بارے میں بےفکر رہتے ہیں اور ڈاکٹر کے پاس بھی نہیں جاتے۔

برطانیہ کے کیئر سروس کے وزیر پال برسٹو نے ان اعدادوشمار کو پریشان کن قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ ہر کسی کو چوکس رہنا چاہیے۔ ان کا کہنا ہے کہ ’حالیہ گرم موسم میں بہت سے لوگوں کی جھلسی جلد اس بات کی یاد دہانی ہے کہ اپنی جلد کو نقصان پہنچانا کتنا آسان ہے۔

اسی بارے میں