شراب نوشی ہیروئین سے زیادہ خطرناک

شراب اور منشیات
Image caption شراب ،ہیروئین اور کوکین سے بھی زیادہ خطرناک ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق شراب نوشی ہیروئین سے زیادہ نقصان دہ ہوتی ہے۔اس رپورٹ کے لکھنے والوں میں پروفیسر ڈیوڈ نٹ بھی شامل ہیں جنہیں اکتوبر 2009 میں حکومت نے برخاست کر دیا تھا۔

رپورٹ میں بیس قسم کی منشیات کے استعمال کے نقصانات بتائے گئے ہیں۔جن میں تمباکو اور کوکین کے نقصانات بلکل ایک جیسے ہیں۔جبکہ ایسٹیسی اور ایل ایس ڈی کے نقصانات نسبتاً ان سے کم ہیں ۔پروفیسر نٹ نے اپنے سرکاری عہدے سے برخاست ہونے کے بعد بھی منشیات کے موضوع پر کام بند نہیں کیا۔

انہوں نے منسشیات پر ایک آزاد سائنٹفک کمیٹی بنائی اس کمیٹی نے ہر قسم کی منشیات کے جسمانی اور ذہنی نقصانات کے ساتھ ساتھ اس کے عادی ہونے ،اس سے متعلق جرائم اور معیشت پر پڑنے والے اثرات کا اندازہ پیش کیا۔

تحقیق کے بعد سامنے آیا کہ ہیروئین، کوکین اور میتھائل ایمفیائن لوگوں کے لیے بہت نقصان دہ ہیں۔لیکن شراب ،ہیروئین اور کوکین سے بھی زیادہ خطرناک ہے۔

جب دونوں طرح کے نشے کے نقصانات کو یکجا کیا گیا تو سب سے زیادہ نقصانات شراب کے سامنے آئے۔جبکہ ہیروئین اور کوکین کا نمبر شراب کے بعد آیا۔

اس رپورٹ کے انکشافات حکومت کی طویل عرصے سے نافذ منشیات کی درجہ بندی کے بلکل بر عکس ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے یہ انکشافات نے برطانیہ اور ہالینڈ میں اس سے پہلے اس سلسلے میں ہونے والے کام کو آگے بڑھایا ہے جس سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے کہ منشیات کی درجہ بندی کا موجودہ نظام اس سے ہونے والے نقصانات کے اندازوں کے مطابق نہیں ہے۔

اسی بارے میں