امریکی روبوٹک طیارہ کی واپسی کی تیاری

فائل فوٹو
Image caption جہاز کے مشن کے متعلق معلومات فراہم نہیں کی گئی ہیں

امریکی فضائیہ بغیر پائٹ والے اس خلائی جہاز کو زمین پر اتارنے کی تیاری میں ہے جسے سات ماہ قبل مدار میں بعض خفیہ تجربات کے لیے بھیجا گیا تھا۔

یہ روبوٹک ایئر کرافٹ سات ماہ سے مدار میں ہے اور امکان ہے اس ہفتے کے اختتام تک یہ زمین پر واپس آجائےگا۔

یہ روبوٹک کرافٹ ’ایکس 37 بی‘ کے نام سے جانا جاتا ہے جو مدار میں تجرابات کے لیے مخصوص گاڑی ہے۔

لاس اینجلس کے شمال مغرب میں واقع وینڈین برگ ایئر پورٹ پر اس خلائی جہاز کے جمعہ اور پیر کے درمیان کسی بھی وقت اترنے کا امکان ہے۔ وقت کا تعین موسم کی مناسبت سے ہی طے ہوگا۔

منگل کو ایئر فورس سپیس کمانڈ کی طرف جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ایئر بیس نے اس کے اترنے کے لیے تیاریاں شروع کر دی ہیں۔

’ایکس 37 بی‘ کے نام کا یا کرافٹ چھوٹے خلائی شٹل کے مشابہ ہے۔ ا سے اپریل میں خلاء میں بھیجا گیا تھا۔

جب سے یہ خلاء میں چھوڑا گیا ہے تبھی سے اس معاملے میں دلچسپی رکھنے والے لوگ اس کے مقاصد کے متعلق قیاس آرائیاں کرتے رہے ہیں۔

لیکن امریکی فضائیہ نے اس کے مقاصد کے متعلق کچھ بتانے سے گریز کیا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ یہ جہاز غیر مخصوص تجربات کے لیے استعمال میں لایا گیا ہے۔

اس خلائی کرافٹ کی خوبی یہ ہے کہ اسے دوبار بغیر کسی تبدیلی کے فضاء میں چھوڑا جا سکتا ہے۔ اس پر کئی ارب ڈالر کا خرچ آیا ہے لیکن مجموعی اخراجات کے متعلق بھی نہیں بتایا گیا ہے۔

اسی بارے میں