سب سے چھوٹے مینڈک کی دریافت

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption یہ مینڈک جنگل کی زمین پر جمع ہونے والے پّتوں میں رہتا ہے

امریکی محققین کا کہنا ہے کہ انہوں نے دنیا کا سب سے چھوٹا مینڈک دریافت کر لیا ہے۔

سائنسدانوں کے مطابق پاپوا نیوگنی کے جنگلات میں پایا جانے والا یہ بھورے رنگ کا مینڈک صرف سات ملی میٹر کا ہے۔

اس مینڈک کو ’پیڈوفرین امائنسز‘ کا نام دیا گیا ہے اور یہ ممکنہ طور پر ریڑھ کی ہڈی رکھنے والا دنیا کا سب سے چھوٹا جانور ہے۔

اس مینڈک کو دیارفت کرنے والی ٹیم کے مطابق یہ جنگل کی زمین پر جمع ہونے والے پّتوں میں رہتا ہے اور اس کا اتنا چھوٹا ہونا اس کے لیے ان پتّوں میں چھپ کر شکار تلاش کرنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

سائنسدانوں کے مطابق یہ مینڈک اس ماحول میں بسنے والے کیڑوں جیسی آوازیں نکالتا ہے۔

سائنسدانوں کی ٹیم کے ایک سربراہ اور امریکہ کی لوئزیانا سٹیٹ یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے پروفیسر کرس آسٹن کا کہنا ہے کہ ’نیو گنی کے جنگلات میں رات کو بےپناہ شور ہوتا ہے اور ہم اس جنگل میں مینڈکوں کی آوازیں ریکارڈ کرنے کی کوشش کر رہے تھے اور یہ جاننا چاہتے تھے کہ ان کے علاوہ آنے والی آوازیں کیسی ہیں‘۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ’پھر ہم نے ان مختلف آوازوں کی تلاش کی تو پتہ چلا کہ یہ پتوں کے ڈھیر سے بلند ہو رہی ہیں۔ وہاں رات تھی اور یہ بہت ہی چھوٹے تھے۔ اس لیے ہم نے پتوں کا ڈھیر اٹھا کر شفاف پلاسٹک کے لفافے میں ڈالا تو ہمیں یہ انتہائی چھوٹے مینڈک پھدکتے دکھائی دیے‘۔