پیرکا دن ناحق ہی بدنام

آخری وقت اشاعت:  پير 27 اگست 2012 ,‭ 08:16 GMT 13:16 PST
پیر کے دن

نفسیات کے ماہرین کا کہنا ہے کہ پیر کا دن ناحق ہی بدنام ہے۔

پیر کے دن کو عام طور عالمی سطح پر پسندیدگی کی نظر سے نہیں دیکھا جاتا ہے۔ اس عام خیال کے برعکس ایک تازہ تحقیق میں کہا گیا ہے پیر بھی ہفتے کے دوسرے دنوں مثلاً منگل، بدھ اور جمعرات کی طرح ہی ہے۔

عام خیال کے مطابق پیر کو لوگ پسندیدگی کی نظر سے نہیں دیکھتے کیونکہ فرصت کے دن کے بعد انہیں پیر کو کام پر واپس جانا پڑتا ہے۔

نئی تحقیق میں یہ پایا گیا ہے جمعہ کے علاوہ کام کے تمام دنوں میں لوگوں کا موڈ ایک ہی طرح کا ہوتا ہے جیسا کہ پیر کو ہوتا ہے۔

امریکی محققوں نے اس نتیجے تک پہنچنے کے لیے تین لاکھ چالیس ہزار لوگوں کے مزاج کا تجزیہ کیا ہے۔

جمعہ کا دن اس لیے مستثنٰی قرار دیا گیا ہے کیونکہ آنے والی چھٹیوں کے خیال سے زیادہ تر لوگوں میں ایک قسم کی خوشی اور فرحت کا احساس ہوتا ہے۔

نفسیات کے عالمی جریدے ’جنرل آف پازیٹو سائیکلوجی‘ میں تحقیق کاروں نے کہا ہے کہ پیر کے بارے میں اس عام خیال میں تبدیلی لائی جانی چاہیے اور یہ کہ ناحق ہی پیر کا دن بدنام ہے۔

سٹونی بروک یونیورسٹی کے پروفیسر آرتھر سٹون کا کہنا ہے کہ ’عالمی پیمانے پر پیر کے بارے میں مشہور منفی تاثرات کے باوجود ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ ہمیں اپنے اس خیال کو چھوڑ دینا چاہیے‘۔

پروفیسر سٹون کی ٹیم نے فون کے ذریعے حاصل کیے گئے اعدادوشمار کی بنیاد پر یہ نتائج اخذ کیے ہیں۔

پروفیسر سٹون نے کہا کہ چونکہ جمعہ، سنیچر اور اتوار کو لوگ زیادہ خوش اور تناؤ سے آزاد رہتے ہیں اس لیے پیر کو یہ احساس زیادہ ہوجاتا ہے وگرنہ کام کے باقی دنوں میں بھی لوگوں میں اسی قسم کا احساس رہتا ہے۔ ناحق ہی پیر اس معاملے میں بدنام ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔