ہبل ٹیلی سکوپ کی کہکشاؤں کی جامع تصویر

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 27 ستمبر 2012 ,‭ 05:18 GMT 10:18 PST

ہبل ٹیلی سکوپ نے کائنات کی اب تک کی کھینچی گئی تصاویر میں سے سب سے شاندار تصاویر بنائی ہیں جس کا نام ایکسٹریم ڈیپ فیلڈ ہے۔

اس تصویر میں کہکشاؤں کے جھرمٹ کی تصویر ہے اور اس میں وہ کہکشائیں بھی شامل ہیں جو اس وقت کی ہیں جب پہلی بار ستارے چمکے تھے۔

لیکن یہ تصویر صرف کیمرے کا رخ اس طرف کرنا اور تصویر کھینچ لینے جیسا آسان نہیں ہے۔ اس میں کچھ کہکشائیں اتنی دور ہیں کہ وہ بہت مدھم آئی ہیں۔

اس تصویر کو کھینچنے کے لتے ہبل ٹیلی سکوپ کو کو آسمان کے ایک چھوٹے سے حصے پر پانچ سو گھنٹے تک فوکس کرنا پڑا اور پھر ان تمام روشنیوں کو تصویر میں محفوظ کر پائی ہے۔

برطانیہ کی کیمبرج یونیورسٹی کی ڈاکٹر میشیل ٹرینٹی جو اس اس منصوبے کی ٹیم میں شامل ہیں کا کہنا ہے ’یہ ایک شاندار تصویر ہے۔ ہم نے آسمان کے ایک چھوٹے سے حصے کو بائیس روز فوکس کیا اور ہم دور افتادہ کائنات کی تصویر بنانے میں کامیاب ہوئے۔ اور ہم دیکھ سکتے ہیں کہ کہکشائیں جب وجود میں آئیں تو کیسی لگتی تھیں۔‘

ایکسٹریم ڈیپ فیلڈ مطالعہ فلکیات میں بہت اہم کردار ادا کرے گی۔ اس تصویر میں جو کہکشائیں اس تصویر میں ہیں ان کی دیگر ٹیلی سکوپس نظر رکھ سکتے ہیں۔

سائنسدان کئی سالوں تک مصرف رہیں گے اور وہ کہکشاؤں کی مکمل تاریخ کو جان سکیں گی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔