بُری خبروں سے عورتوں پر زیادہ ذہنی دباؤ

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 11 اکتوبر 2012 ,‭ 17:21 GMT 22:21 PST

کیا عورتوں پر بری خبروں کا زیادہ اثر ہوتا ہے؟

ایک تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ بری خبریں عورتوں کے ذہنی دباؤ سے نمٹنے کے انداز کو تبدیل کر دیتی ہے۔

خواتین کو اگر اخبار میں منفی خبریں (مثلاً قتل و غارت کے بارے میں) پڑھنے کو دی جائیں تو ان کے اندر دباؤ والے ہارمون زیادہ مقدار میں پیدا ہوتے ہیں۔

طبی جریدے پی او ایل ایس میں شائع ہونے والی یہ تحقیق ساٹھ افراد پر کی گئی اور اس کے دوران معلوم ہوا کہ مردوں پر اس قسم کا اثر نہیں ہوتا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس تحقیق کے نتائج سے دونوں اصناف کے درمیان اہم فرق سامنے آیا ہے۔

کینیڈا کے تحقیق کاروں نے منفی خبروں پر مشتمل اخبار کے تراشے اکٹھے کیے، جن میں حادثات اور قتل وغیرہ کی خبریں شامل تھیں، اور اس کے ساتھ کچھ غیر جانب دار خبریں بھی شامل کیں مثال کے طور پر فلموں کے مہورت وغیرہ۔

مردوں اور عورتوں نے یا تو منفی خبریں پڑھیں یا غیر جانب دار خبریں۔اس کے بعد ان کا دباؤ کا ٹیسٹ کیا گیا جس کے دوران جسم کے اندر دباؤ کے ہارمون کورٹی سول کی مقدار ناپی گئی۔

یونیورسٹی آف مونٹریال سے تعلق رکھنے والی ایک تحقیق کار میری فرانس میرن نے کہا: ’اگرچہ محض خبروں کے باعث دباؤ کی مقدار میں اضافہ نہیں ہوا، لیکن ان خبروں کی وجہ سے عورتیں زیادہ اثر پذیر ہوگئیں جس کی وجہ سے بعد میں زیادہ دباؤ والے حالات پر ان کا جسمانی ردعمل متاثر ہوا۔‘

مردوں میں کورٹی سول کی مقدار میں اضافہ نہیں ہوا۔

میرن نے مزید کہا ’خبروں کو نظرانداز کرنا مشکل ہے، خاص طور پر ایسے حالات میں جب خبروں کے متنوع ذرائع موجود ہوں۔‘

سائنس دانوں نے قیاس آرائی کی ہے کہ عورتیں اپنے بچوں کو درپیش خطرات کی زیادہ بہتر شناخت کر سکتی ہیں اس لیے وہ دباؤ پر مختلف طریقے سے ردِعمل ظاہر کرتی ہیں۔

لندن کے کنگز کالج کے شعبہ نفسیات کے پروفیسر ٹیری موفٹ نے کہا: ’خود بیان کردہ مطالعات کے مطابق عورتیں اپنے آپ کو مردوں کے مقابلے پر دباؤ پر زیادہ اثرپذیر ظاہر کرتی ہیں۔‘

دوسرے سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ یہ مطالعہ اتنا چھوٹا ہے کہ اس کے نتائج کی تصدیق کے لیے مزید تجربات کی ضرورت ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔