ریاضی سکھانے کے لیے انٹریکٹیو ڈیسک

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 23 نومبر 2012 ,‭ 16:52 GMT 21:52 PST
انٹریکٹو ڈیسک

ان ڈیکس کا تجربہ برطانیہ کی ڈرہم یونیورسٹی میں کیا گیا ہے

ایک تازہ تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ سکول میں نصب کیے جانے والے انٹریکٹو ڈیسک پرائمری سکول کے طلبہ میں ریاضی کی صلاحیت میں اضافے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔

’ملٹی ٹچ‘ یعنی چھونے سے چلنے والے اور ایک سے زیادہ لوگوں کے ذریعے استعمال کیے جانے والے ان ڈیسکوں کا تجربہ سب سے پہلے برطانیہ کی ڈرہم یونیورسٹی میں کیا گیا ہے۔

ان ڈیسکوں کی خاصیت یہ ہے کہ ایک وقت میں ایک سے زیادہ بچے ان کو استمعال کر سکتے ہیں، اس لیے ان پر کسی ایک بچے کا قبضہ نہیں ہوتا۔

تین برس تک جاری رہنے والے اس ریسرچ پروجیکٹ میں چار سو سے زائد بچوں نے حصہ لیا جن کی عمر آٹھ سے دس برس کے درمیان تھیں۔

محققین کا کہنا ہے کہ یہ ڈیکس مہنگے ہیں اس لیے فی الحال ان کا ہر سکول میں فراہم کیا جانا مشکل ہے۔ البتہ ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے ایسے متعدد طریقہ کار ڈھونڈ نکالے ہیں جس سے اس تکنیک کی قیمت کم کی جاسکے گی۔

محقق ایما مارسئیر کا کہنا ہے کہ یہ ڈیسک طلبہ کے ریاضی سے متعلق سوالوں کے جواب دینے میں بے حد مدد گار ثابت ہوتے ہیں۔

محققین کا دعوی ہے کہ یہ انٹریکٹو ڈیسک روایتی طور پر کاغذ پر ریاضی کی مشق کرنے سے کہیں زيادہ مدد گار ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ’بار بار مشق کرنے سے ریاضی میں مہارت حاصل کرنا آسان ہے، لیکن ایک سوال کے کئی حل تلاش کرنے کا طریقہ سکھانا آسان کام نہیں ہے۔‘

ڈاکٹر مارسیئر کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان انٹریکٹو ڈیسکوں کی مدد سے اساتذہ کے لیے آسان ہوگا کہ وہ سبھی طلبہ کو ایک ساتھ مل کر آسانی سے ریاضی سکھا پائیں گے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔