سرطان کی تشخیص، سانس کے ذریعے

آخری وقت اشاعت:  بدھ 5 دسمبر 2012 ,‭ 08:20 GMT 13:20 PST

سانس کے ذریعے خارج ہونے والا کیمیائی مادے سرطان کی تشخیص میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں

سائنسدانوں نے ایک ایسا ٹیسٹ تیار کیا ہے جو مریض کے سانس کا جائزہ لے کر یہ تعین کر سکے گا کہ کہیں وہ بڑی آنت کے سرطان میں تو مبتلا نہیں۔

اس ٹیسٹ میں رسولی کے اندر بننے والے ان کیمیائی مادوں کا جائزہ لیا جاتا ہے جو سانس کے ذریعے خارج ہوسکتے ہیں۔

’برٹش جرنل آف سرجری‘ نامی جریدے میں شائع ہونے والی اس تحقیق کی درستگی کی شرح چھہتر فیصد پائی گئی۔

تاہم سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ سانس کے ذریعے سرطان کے لیے مکمل طور پر نتیجہ خیز ٹیسٹ جلد منظرِ عام پر آنے کا امکان کم ہے۔

سائنسدان سانس کے ذریعے سرطان کی دیگر اقسام، ذیابیطیس اور ٹی بی کے لیے بھی مختلف ٹیسٹ تیار کر رہے ہیں۔

سرطان کے مرض کی جلد تشخیص ہونے کی صورت میں مریض کا علاج بہت بہتر انداز میں کیا جا سکتا ہے، مگر اکثر اوقات اس مرض میں ظاہری علامات مرض کے پھیل جانے کے بعد سامنے آتی ہیں۔

اس وقت موجود سرطان کے ٹیسٹوں کے تحت انسانی فضلے میں خون کی موجودگی کا جائزہ لیا جاتا ہے تاہم ان ٹیسٹوں کو بھی نتیجہ خیز نہیں مانا جا سکتا اور عموماً مریضوں کو مزید ٹیسٹ کروانے پڑتے ہیں۔

سانس کے ذریعے سرطان کی تشخیص کے لیے ٹیسٹ اس بات پر انحصار کرتے ہیں کہ سرطان کی رسولی چند ایسے کیمیائی مادے پیدا کرتی ہیں جو کسی صحت مند فرد میں موجود نہیں ہونے چاہیئیں۔

ان کیمیائی مادوں کو اکثر سانس کے ذریعے پہچانا جا سکتا ہے۔ چند جائزوں کے مطابق تو کتوں کو بھی ان مادوں کی بو پہچاننا سکھایا جا سکتا ہے تاہم اس تحقیق میں یہ ٹیسٹ ایک برقی آلے کی مدد سے کیا گیا۔

اٹلی میں ایک ٹیم نے 37 مریضوں کے سانس کے نمونوں کا مقابلہ اکتالیس صحت مند افراد کے سانسوں کے نمونوں سے کیا۔ اس تجربے میں سانس کے ذریعے کیے گئے ٹیسٹ کو پچاسی فیصد درست پایا گیا۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ یہ ٹیسٹ اُن مریضوں کے لیے انتہائی فائدہ مند ثابت ہو سکتے ہیں جو سرطان کے مرض کا علاج کروا چکے ہیں اور انھیں مرض کی واپسی کا خطرہ لاحق ہو۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔