چاند پر ایب اور فلو کی تباہی

آخری وقت اشاعت:  منگل 18 دسمبر 2012 ,‭ 22:51 GMT 03:51 PST

ایب اور فلو کا حجم ایک واشنگ مشین کے برابر ہے

امریکی خلائی ایجنسی ناسا کے دو مصنوعی سیارچوں ایب اور فلو کو چاند پر موجود چوبیس کلومیٹر بلند پہاڑ سے ٹکرا کر تباہ کر دیا گیا ہے۔

ان دونوں سیٹلائٹ کے بچے ہوئے ایندھن کو استعمال کر کے انہیں چاند کے شمالی علاقے میں گرایا گیا۔

جب یہ دونوں سیارچے چاند پر تباہ ہوئے تو اس وقت چاند کے اس حصے میں اندھیرا تھا۔ ایب اور فلو بیس سیکنڈ کے وقفے سے چاند پر گرے جس کے باعث چھوٹے گڑھے پڑے۔

ایب اور فلو کا حجم ایک واشنگ مشین کے برابر تھا اور چونکہ دونوں ہی کا ایندھن ختم ہو چکا تھا اس لیے ان کا چاند پرگرنا زمین سے نظر نہیں آیا۔

تاہم ناسا کے ایک اور مصنوعی سیارے نے اس منظر کو دیکھا۔

اس سے قبل ناسا نے کہا تھا کہ ان سیٹلائٹس کو جان بوجھ کر اس لیے تباہ کیا جا رہا ہے کیونکہ اگر ایسا نہ کیا گیا تو وہ خود چاند کے اس حصے پر گریں گے جو تاریخی اہمیت کا حامل ہے جیسا کہ جہاں اپالو نے لینڈ کیا تھا۔

ایب اور فلو نے اپنے کام کے دوران بہت اہم معلومات اکٹھی کی ہیں۔ ان کا کام یہ معلوم کرنا تھا کہ کیسے چاند کے مختلف حصوں میں کششِ ثقل میں تبدیلی آتی ہے۔

انہی معلومات کے ذریعے سائنسدانوں کو یہ معلوم کرنے میں مدد ملے گی کہ چاند پر مختلف چیزیں کیسے وجود میں آئیں۔

ایم آئی ٹی کی پرنسپل اور تحقیق دان پروفیسر ماریہ زبر کا کہنا ہے ’ہم نے ان دو سیٹلائٹس سے بہت معلومات اکٹھی کی ہیں اور صاف بات یہ ہے کہ میں سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ یہ مشن اتنا کارآمد ثابت ہو گا۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔