سابق امریکی صدر بش سینیئر کی ای میل ہیک

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 فروری 2013 ,‭ 13:58 GMT 18:58 PST

بش سینیئر برونکائٹس کے علاج کے لیے سات ہفتے تک ہسپتال میں داخل رہے تھے

ایک کمپیوٹر ہیکر نے سابق امریکی صدر جارج ہربرٹ بش اور ان کے خاندان کی ذاتی ای میلز اور تصاویر ہیک کر لی ہیں۔

انٹرنیٹ پر نشر ہونے والی ایک تصویر میں 88 سالہ سابق صدر کو ہسپتال میں بستر پر لیٹے دکھایا گیا ہے جہاں انھیں حال ہی میں برونکائٹس کے علاج کے لیے داخل کیا گیا تھا۔

چوری کردہ ای میلز میں مبینہ طور پر بش خاندان کے کئی افراد کے پتے اور ذاتی معلومات شامل ہیں۔

صدر بش کے ترجمان جم میک گرا نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ اس معاملے کی تفتیش کی جا رہی ہے۔

جم میک گرا نے اخبار ہیوسٹن کرانیکل کو بتایا، ’ہم ان مجرمانہ معاملات پر بات نہیں کرتے جن کی تحقیقات کی جا رہی ہوں۔‘

ویب سائٹ ’دا سموکنگ گن‘ کے مطابق ہیکر نے بش خاندان کے کئی افراد کی ای میلز تک رسائی حاصل کی ہے۔

ویب سائٹ بپر کہا گیا ہے کہ چوری شدہ ای میلوں میں کئی ایسی ای میلیں بھی شامل ہیں جن میں سابق صدر کی صحت کے بارے میں سنگین تشویش پائی جاتی ہے۔ ان میں صدر اوباما کا ایک نائب کے ذریعے بھیجا گیا ذاتی پیغام بھی شامل ہے۔

بش سینیئر کو 14 جنوری کو سات ہفتے کے علاج کے بعد ہسپتال سے فارغ کیا گیا تھا۔ اس دوران ان کا برونکائٹس کے مرض کا علاج کیا گیا تھا۔

جو تصاویر ہیک کی گئی ہیں ان میں ان کے صاحبزادے سابق صدر جارج ڈبلیو بش کی تصاویر بھی شامل ہیں۔

دا سموکنگ گن نے کہا ہے کہ اس کا ہیکر سے رابطہ ہے، جس کا فرضی نام گوسیفر ہے۔

ویب سائٹ نے کہا ہے کہ اس نے صدر بش کے ہسپتال میں قیام کے بارے میں بہت سی ’دلچسپ ای میلز‘ اکٹھی کی ہیں۔

جارج ایچ ڈبلیو بش 1989 سے 1993 تک امریکہ کے صدر رہے تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔