موبائل کمپنیاں ڈیٹا سے زیادہ کمائیں گی

آخری وقت اشاعت:  پير 25 فروری 2013 ,‭ 12:59 GMT 17:59 PST

موبائل فون چلانے والی کمپنیوں کی نمائندہ تنظیم جی ایس ایم اے کا کہنا ہے کہ دو ہزار اٹھارہ تک موبائل فون کمپنیاں فون کالوں کی نسبت انٹرنیٹ اور ڈیٹا سروس سے زیادہ کمائیں گے۔

یہ تنظیم جو موبائل فون صنعت کی نمائندہ تنظیم سمجھی جاتی ہے کہ مطابق موبائل فون کی ایسی مصنوعات جو انٹرنیٹ سے منسلک ہیں کی تعداد میں اضافہ ہوا اور مشین سے مشین کے درمیان بڑھتے ہوئے روابط کی وجہ سے یہ مکمن ہو گا۔

اس رپورٹ میں اس تنظیم نے یہ بھی لکھا ہے کہ کیسے موبائل فون خصوصاً ترقی پذیر ممالک میں زندگیاں بدل رہا ہے۔

اس رپورٹ میں لکھا گیا ہے کہ موبائل فون کی سروس افریقی ممالک میں کئی لاکھ زندگیاں بچا رہی ہے۔

یہ اگلے پانچ سالہ پیش گوئیوں پر مبنی رپورٹ عالمی موبائل کانگریس کے موقع پر جاری کی گئی ہے جو کہ اس تنظیم کی ایک سالانہ تقریب ہے اور اس دفعہ بارسلونا سپین میں منعقد ہو رہی ہے۔

اس رپورٹ میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ مہلک بیماریوں جیسا کہ ملیریا، زیابیطس اور ایڈز کے خلاف جنگ میں موبائل فون کے استعمال کی وجہ سے بہت زیادہ معاونت ہو گی۔

خوراک کی بچت اور موبائلز

اسی رپورٹ میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ دو سو چالیس ٹن خوراک مواصلاتی مسائل کے باعث یا خیرہ کرنے کے دوران ضائع ہو جاتی ہے۔

مگر موبائل کے استعمال سے جب آپ ٹرکوں پر نظر رکھ سکیں گے یا زخیرہ کرنے کی جگہوں کے درجہ حرارت کی صحیح خبر رکھ سکیں گے تو اس سے دو ہزار سترہ تک اس قدر خوراک بچائی جا سکے گی جو چالیس کروڑ افراد کے کام آ سکے گی اور یہ کینیا کی کل آبادی کے برابر لوگ ہیں۔

اسی رپورٹ میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ دو سو چالیس ٹن خوراک مواصلاتی مسائل کے باعث یا زخیرہ کرنے کے دوران ضائع ہو جاتی ہے۔

مگر موبائل کے استعمال سے جب آپ ٹرکوں پر نظر رکھ سکیں گے یا زخیرہ کرنے کی جگہوں کے درجہ حرارت کی صحیح خبر رکھ سکیں گے تو اس سے دو ہزار سترہ تک اس قدر خوراک بچائی جا سکے گی جو چالیس کروڑ افراد کے کام آ سکے گی اور یہ کینیا کی کل آبادی کے برابر لوگ ہیں۔

اسی طرح دو ہزار سترہ تک موبائل فون، ٹیبلٹس کی مدد سے اٹھارہ لاکھ مزید بچوں کو تعلیم دی جا سکے گی۔

گی ایس ایم اے کے چیف مارکیٹنگ افسر مائیکل او ہارا نے کہا کہ’موبائل ڈیٹا صرف ایک ضرورت کی شے نہیں بلکہ اب یہ ہماری زندگی، معیشت اور معاشرے میں ایک اہم شے بنتی جا رہی ہے جب زیادہ افراد ایک دوسرے سے رابطے میں ہیں‘۔

اس ایسوسی ایشن نے اس بات کی پیش گوئی کی ہے کہ برطانیہ اور امریکہ میں فون کالوں کی نسبت ڈیٹا کا استعمال دو ہزار چودہ تک بہت بڑھ جائے گا۔

اہم بات یہ ہے کہ ارجنٹائن اس دوڑ میں ان دونوں ممالک سے پہلے آگے نکل جائے گا جہاں دو ہزار تیرہ میں ہی یہ تناسب ڈیٹا کے حق میں ہو جائے گا۔

افریقہ میں کینیا وہ واحد ملک ہے جو سب سے پہلے دو ہزار سولہ میں اس سطح پر پہنچے گا۔

موبائل ڈیٹا

"موبائل ڈیٹا صرف ایک ضرورت کی شے نہیں بلکہ اب یہ ہماری زندگی، معیشت اور معاشرے میں ایک اہم حیثیت اختیار کرتی جا رہی ہے جب زیادہ سے زیادہ افراد ایک دوسرے سے رابطے میں ہیں۔"

جی ایس ایم اے کے چیف مارکیٹنگ افسر مائیکل او ہارا

ایک اور اہم بات یہ ہے کہ دو ہزار سترہ تک موبائل صحت کی سہولیات چار سو ارب تک کئی ممالک کے سالانے بجٹ سے کم کر لیں گے۔

اسی طرح ایسی کاریں جو ایک دوسرے کے ساتھ رابطے میں ہوں گیں ہر نو میں سے ایک زندگی بچا سکیں گیں اور اسی طرح یہ آلودگی میں کمی کا باعث بھی بنہیں گے۔ سمجھدار میٹر ستائیس ملین ٹن کے قریب کاربن کی آلودگی کے اخراج کو روک سکیں گے جو کہ ایک اعشاریہ دو بلین درخت لگانے کے برابر ہو گا۔

یاد رہے کہ موبائل فون کی صنعت پر بذاتِ خود تنقید کی جاتی ہے کہ وہ آلودگی کا باعث بنتے ہیں جو ان کے موبائل فونوں میں استعمال کیے گئے زہریلی اشیا کی وجہ سے پھیلتی ہے۔

اسی طرح بعض موبائل فون بنانے والوں پر یہ بھی تنقید کی جاتی ہے کہ انہوں نے کم عمر بچوں کو ملازمت پر رکھا ہوا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔