تین گنا تک کھنچنے والی لچکدار بیٹری

آخری وقت اشاعت:  بدھ 27 فروری 2013 ,‭ 22:23 GMT 03:23 PST

لچکدار بیٹریاں بنانے کے لیے محققین کی اس ٹیم نے ’سرپنٹائن کنکشنز‘ کا خیال پیش کیا

محققین نے ایک ایسی لچکدار بیٹری کی نمائش کی ہے جسے کارکردگی میں کمی لائے بغیر کھینچ کر تین گنا بڑا کیا جا سکتا ہے۔

دنیا میں اس وقت لچکدار برقی اشیاء کی مقبولیت میں اضافہ ہو رہا ہے اور ایسی برقی اشیاء کو توانائی کی فراہمی ایک مسئلہ رہی ہے۔

اس نئی لچکدار بیٹری میں کھنچنے والے پولیمر پر توانائی محفوظ رکھنے والے نقطے نصب کیے گئے ہیں۔

محققین کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایسی بیٹریوں کو بغیر کسی تار کی مدد سے دوبارہ چارج کیا جا سکتا ہے۔

اس تحقیق میں شامل شکاگو کی یونیورسٹی آف الینوائے کے پروفیسر جان راجرز کا کہنا ہے کہ ’لچکدار بیٹریوں کی تیاری بہت مشکل کام ہے کیونکہ برقی اشیاء کے برعکس ان کے حجم کو کم کرنے سے ان کی کارکردگی متاثر ہوتی ہے۔‘

بی بی سی نیوز سے بات کرتے ہوئے راجرز کا کہنا تھا کہ ’ہم نے کئی طریقے اپنائے جن میں ریڈیو فریکوئنسی توانائی سے شمسی توانائی تک سب شامل تھا۔‘

حالیہ برسوں میں پروفیسر راجرز نے اپنے ساتھی محققین کے ساتھ مل کر لچکدار برقی اشیاء پر کام کیا ہے جنہیں لچکدار پولیمر پر فاصلے سے نصب چھوٹے چھوٹے سرکٹس کی مدد سے توانائی فراہم کی گئی۔

ایسی لچکدار بیٹریاں بنانے کے لیے محققین کی اس ٹیم نے ’سرپنٹائن کنکشنز‘ کا خیال پیش کیا جس میں تاروں کو انگریزی کے حرف S کی شکل میں بار بار جوڑا جاتا ہے۔ اس شکل میں سرکٹس کی موجودگی کی وجہ سے پولیمر کو کھینچنے پر بھی توانائی فراہم کرنے والے سیلز کی کارکردگی متاثر نہیں ہوتی۔

اس ٹیم کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایسی لچکدار بیٹریاں ان آلات کے لیے بےحد مناسب ہیں جو انسانی جسم میں یا کسی شخص کی کھال پر نصب ہوتے ہیں اور مختلف اعضا کی حرکات کی نگرانی کا کام کرتے ہیں۔

تاہم پروفیسر راجرز کے مطابق اب تک تیار کی جانے والی بیٹریاں صرف بیس مرتبہ ہی چارج کی جا سکتی ہیں اور ان کی مدت میں اضافے کے لیے مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔