ناسا کا تاریخی لانچنگ پیڈ کرایے پر دستیاب

Image caption ناسا چاہتا ہے کہ اس لانچنگ پیڈ کو پانچ سال کے لیے لیز پر دیا جائے

امریکی خلائی ادارہ ناسا فلوریڈا کے کینیڈی سپیس سینٹر میں خلائی جہاز کے ایک تاریخی لانچنگ پیڈ کو ٹھیکے پر دینا چاہتا ہے۔

لانچ کمپلکس 39 اے سے چاند پر پہلا خلائی مشن روانہ کیا گیا تھا اور خلائی جہاز اٹلانٹس بھی مشن پر جانے کے لیے اسی کو استعمال کرتا تھا۔

ناسا اب چاہتا ہے کہ اس لانچنگ پیڈ کو کسی نجی ٹھیکدار کو لیز پر دے دیا جائے۔

امید ہے کہ دو نجی خلائی کمپنیاں ٹھیکہ حاصل کرنے کے لیے بولی دیں گی۔

اس پیڈ کو چاند کے لیے اپالو خلائی مشن کے لیے 1967 میں تیار کیا گیا تھا اور اس کے بعد سے اب تک یہاں سے نوے خلائی مشن روانہ کیے جا چکے ہیں۔

سال دو ہزار گیارہ میں خلائی جہاز اٹلانٹس کو ریٹائرڈ کیے جانے کے بعد سے اس سہولت کو استعمال نہیں کیا گیا ہے۔

ناسا نے اپنے تین خلائی جہازوں اٹلانٹس، ڈسکوری اور اینڈریو کو ریٹائرڈ کر دیا ہے اور اس کے بعد سےکینیڈی سپیس سینٹر میں بہت ساری سہولیات بے کار پڑی ہیں۔

برطانوی خبر رساں اداے رائٹرز کے مطابق ناسا ایجنسی کا کہنا ہے کہ فلوریڈا سپیس پورٹ پر موجود 150 مراکز مسمار کر دیے گئے یا نجی آپریٹرز کے حوالے کر دیے گئے ہیں۔

خلائی مرکز کے ڈائریکٹر بوب کبانا کا کہنا ہے کہ’ہم سینٹر میں موجود سہولیات جو زیراستعمال ہیں، ایک سے زائد ہیں اور یا خلائی مشن اور اورئن کو سپورٹ نہیں کرتی ہیں، ان کو کم کر کے رائٹ سائزنگ کی پالیسی پر کاربند رہیں گے۔‘

انہوں نے کہا کہ مریخ پر مشنز بھیجنے کے لیے 39 اے کی اب ضرورت نہیں ہے۔

خیال رہے کہ ناسا کا خلائی مشن اورئن ایڈوانس پروگرام ہے جس کے تحت خلا بازوں کو بین الاقوامی خلائی سٹیشن سے آگے کی منزلوں پر روانہ کیا جائے گا۔ان میں مریخ سرفہرست ہے۔

اسی بارے میں