پیٹربرا کی موٹی بطخیں ڈائٹنگ پر

برطانیہ کے شہر پیٹر برا میں جانوروں کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے حکام کے مطابق وہاں کی بطخیں بہت زیادہ ڈبل روٹی کھا کر موٹی ہو گئی ہیں۔

کرس پارک نے جو فیری میڈوز نامی تنظیم کے لیے کام کرتے ہیں کا کہنا ہے کہ وہ پارک میں آنے والے لوگوں کو اب گولیاں دے رہے ہیں تاکہ وہ ان بطخوں کو کھلا سکیں جس سے ان کا وزن کم کرنے میں مدد ملے گی۔

کرس نے کہا کہ ’اگر آپ ہر روز سارا دن صرف ڈبل روٹی کھائیں گے تو آپ یقیناً موٹے ہی ہوں گے‘۔

برٹش ٹرسٹ فار اورتھینولوجی کے ترجمان گراہم ایپلٹن نے بھی کہا کہ وہ اِن بطخوں کے بہت زیادہ ڈبل روٹی کھانے کے بارے میں فکر مند ہیں۔

کرس پارک نے کہا کہ اس خوراک کی زیادتی کی وجہ سے بہت سارے پرندے بیمار ہو رہے ہیں یا ان کی صحت خراب ہے جس کی وجہ ان کی خوراک ہے۔

’اگر صحیح خوراک نہیں ملے گی تو بطخیں اڑ نہیں سکیں گیں۔ ہماری بطخیں تو موٹی ہو ہی گئی ہیں مگر ہم ان کے کئی بچوں میں بھی مسائل دیکھ رہے ہیں جیسا کہ اینجل ونگ نامی مسئلہ ہے جس میں بچوں کے پر صحیح طور پر نشونما نہیں پاتے جس کا حتمی نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ وہ اڑ نہیں سکتے۔‘

انہوں نے امید ظاہر کی کہ اب پارک کے نئے خوراک کی فراہمی کے مرکز اور گولیاں لوگوں کو اس بات پر راغب کریں گے کہ وہ ان پرندوں کو درست اور موزوں خوراک فراہم کریں۔

کیمبرج شائر کا پیپ ورتھ ہسپتال بھی ان پرندوں کے موٹاپے کے بارے میں فکر مند ہے۔

اب پارک میں موجود دکان پرندوں کی خوراک کے دانے فروخت کرتی ہے اور دکان پر کام کرنے والے ایک کارکن کا کہنا ہے کہ ’اب ہم نے اس بات کا تعین کیا ہے کہ ہم نے روزانہ کتنے لفافے خوراکے کے فروخت کرنے ہیں کیونکہ ہماری بطخوں کو پہلے ہی اچھی خوراک وافر مقدار میں ملتی ہے بلکہ انہیں کھانے کو کچھ زیادہ ہی ملتا ہے تو ایک طرح سے اب یہ بطخیں ڈائٹ پر ہیں‘۔

اب حکام کی کوشش ہے کہ ان بطخوں کو متوازن خوراک ملے جس میں میوہ جات، پھل اور بار دانہ شامل ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ’جب آپ کی بطخیں ایک تالاب میں ہی رہتی ہیں تو ان کا کام کیا ہوتا ہے سارا دن بیٹھے رہنا اور کھانا تو وہ پر خوری کا شکار ہوتی ہیں جس کے نتیجے میں وہ موٹی ہو جاتی ہیں۔‘

اسی بارے میں