مائیکروسافٹ کے چیف کا ریٹائر ہونے کا اعلان

مائیکروسافٹ کے چیف سٹیو بالمر نے 12 ماہ کے اندر اندر ریٹائر ہونے کا اعلان کیا ہے۔

اس خبر پر مائیکروسافٹ کے حصص میں نو فیصد کا اضافہ ہو گیا۔ مائیکروسافٹ پر موبائل ڈیوائسز کی منافع بخش مارکیٹ میں دیر سے داخل ہونے پر تنقید کی جاتی رہی ہے۔

بالمر نے ایک بیان میں کہا: ’اگرچہ اس قسم کی تبدیلی کے لیے کوئی بھی وقت مثالی نہیں ہوتا، لیکن اب اس کا مناسب وقت ہے۔ ‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’ہمیں ایک ایسے سربراہ کی ضرورت ہے جو اس نئی سمت میں رہنمائی کے لیے زیادہ دیر تک موجود رہے۔‘

مائیکروسافٹ دنیا کی سب سے بڑی سافٹ وئیر کمپنی ہے اور اس نے سٹیو بالمر کا جانشین ڈھونڈنے کے لیے ایک خصوصی کمیٹی بٹھا دی ہے۔ اس کمیٹی میں مائیکروسافٹ کے بانی بل گیٹس بھی شامل ہیں۔

57 سالہ بالمر نے 2000 میں بل گیٹس کی جگہ سنبھالی تھی۔ دونوں کے درمیان 1973 میں ہارورڈ یونیورسٹی میں تعلیم کے دوران پہلی بار ملاقات ہوئی تھی۔ بالمر 1980 میں مائیکروسافٹ میں شامل ہو گئے تھے۔

مائیکروسافٹ اگرچہ دنیا کے بعض مقبول ترین سافٹ وئیر بناتی ہے لیکن اس پر تنقید کی جاتی ہے کہ اس نے ایپل اور گوگل کی طرح موبائل مارکیٹ میں قدم رکھنے میں دیر کی ہے۔

اب جب کہ صارفین کمپیوٹروں کو چھوڑ کر ٹیبلٹس اور سمارٹ فونز کا رخ کرنے لگے ہیں، مائیکروسافٹ مشکلات سے دوچار نظر آتی ہے۔

مائیکروسافٹ ٹیبلٹس اور سمارٹ فون کی دنیا میں قدم جمانے میں ناکام رہی ہے۔ گذشتہ ماہ تبدیلی کے ایک پروگرام میں اس کمی کو دور کرنے پر غور کیا گیا تھا۔

فورسٹر ریسرچ کے میڈیا تجزیہ کار اینڈریو بارٹلز کہتے ہیں کہ سٹیو بالمر پر درست تنقید کی جاتی ہے کہ ’جب صارفین جوق در جوق ٹیبلٹس کی طرف جا رہے تھے تو مائیکروسافٹ کھڑی منھ دیکھتی رہی۔‘

تاہم انھوں نے کہا کہ بالمر ایکس باکس اور بِنگ جیسے کامیاب مصنوعات کے لیے کریڈٹ کے مستحق ہیں۔

اسی بارے میں