مریض کی چربی سے اس کے چہرے کی تعمیرِ نو

Image caption ماہرین کا کہنا ہے کہ اس طرز کی تحقیق کے انتہائی مفید ہونے کا امکان ہے تاہم ابھی اس پر کام کی بہت ضرورت ہے

لندن کے گریٹ اورمنڈ سٹریٹ ہسپتال کے ڈاکٹر کوشش کر رہے ہیں کہ لوگوں کے جسم سے حاصل کردہ چربی کے سٹیم سیلز کی مدد سے ان کے چہرے کے متاثرہ حصوں کی تعمیرِ نو کی جا سکے۔

ان ڈاکٹرز نے لیبارٹری میں کارٹیلیج بنایا ہے جس کے بعد انہیں یقین ہے کہ یہ کان اور ناک کو دوبارہ بنانے کے عمل میں بہت کارآمد ثابت ہوگا۔

کارٹیلج ایک لچکدار ٹشو ہوتا ہے جو ہڈی سے کم لیکن پٹھوں سے زیادہ سخت ہوتا ہے۔

برطانوی ڈاکٹرز کارٹیلیج کی مدد سے مائیکروشیا نامی بیماری کا علاج کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اس بیماری میں بچوں کے کان غیر قدرتی طور پر چھوٹے رہ جاتے ہے۔ فی الوقت ایسے بچوں کے علاج کے لیے ان کی پسلیوں سے کارٹیلیج لے کر کان میں لگایا جاتا ہے جو سینے پہ مستقل نشان چھوڑ جاتا ہے اور پسلیوں سے لیا گیا کارٹیلیج کبھی واپس نہیں آتا۔

نینو میڈیسن نامی جرنل میں شائع ہونے والی اس تحقیق کے ماہرین کا ماننا ہے کہ اُن کی اس تکنیک سے طب کی دُنیا میں انقلاب آسکتا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس طرز کی تحقیق کے انتہائی مفید ہونے کا امکان ہے تاہم ابھی اس پر کام کی بہت ضرورت ہے۔

اس تکنیک میں بچے کے جسم سے چربی کا ایک چھوٹا سا نمونہ لیا جاتا، اس میں سے سٹیم سیلز اخذ کیے جاتے ہیں اور انہیں محتاط انداز میں کان کی شکل کے ایک سانچے میں بڑھنے دیا جاتا ہے۔ کیمیائی اجزا کی مدد سے سٹیم سیلز کو کارٹلیج کے خلیوں میں تبدیل کر لیا جاتا ہے۔

اس تیار کردہ کان کو بچے کی جلد پر لگایا جا سکے گا۔ محققین کارٹیلج تیار کرنے میں تو کامیاب ہو سکے ہیں تاہم مریضوں پر استعمال کرنے سے پہلے اس کے حفاظتی ٹیسٹ ہونا ہیں۔

یہ تکنیک پندرہ سالہ سیمیول کولومپس جیسے مریضوں کے لیے انتہائی مقید ہو سکتی ہے جو کہ اپنے کان کو دوبارہ بنانے کے عمل سے گزر چکے ہیں۔ ان کی والدہ کا کہنا ہے کہ وہ اس تحقیق کا خیر مقدم کرتی ہیں۔

’انہیں اس کے جسم سے کارٹیلج نہیں لینا پڑتی۔ اس کے جسم پر وہاں اب نشان ہے اور وہ کہتا ہے کہ اسے وہاں تکلیف بھی ہوتی ہے۔‘

اس عمل کو دیگر جسمانی اعضا کے لیے کارٹلیج بنانے کے لیے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے جیسے کہ ناک جو کہ سرطان سے نمٹنے کے لیے کی جانے والی سرجری میں متاثر ہو سکتا ہے۔

ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس عمل کو آگے بڑھا کر ہڈیاں بنانے کے لیے بھی استعمال کیا جا سکے گا۔

اسی بارے میں