’کولیسٹرول کی دوا سٹیٹن مضرِ صحت نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Geoff Kidd SPL
Image caption مارچ 2012 میں ہونے والی ایک تحقیق نے ثابت کیا ہے کہ وہ افراد جن میں دل کے امراض ہونے کے امکان کم ہیں، انھیں بھی سٹیٹن لینے سے فائدہ ہو گا

برطانیہ کے ایک طبی جریدے میں شائع ہونے والے دو تحقیقی مقالہ جات کو جریدے سے خارج کر دیا جائےگا جن میں کہا گیا تھا کہ کولیسٹرول کو کم کرنے والی سٹیٹن نامی ادویات صحت کے لیے مضر ہیں۔

اس تحقیق کے مصنفین نے اپنے ان اعداد و شمار کو واپس لے لیا ہے جن میں کہا گیا تھا کہ سٹیٹن استعمال کرنے والے 20 فیصد مریضوں کو جگر اور گردے کے امراض لاحق ہو سکتے ہیں۔

سٹیٹن گروپ میں شامل دو اہم ادویات لپی ٹور اور کریسٹور ہیں اور یہ پاکستان سمیت دنیا کے بیشتر ممالک میں عام استعمال ہوتی ہیں۔ برطانیہ میں دل کے امراض میں مبتلا تقریباً 70 لاکھ افراد سٹیٹن ادویات استعمال کرتے ہیں۔

ماہرین کو خدشہ ہے کہ اکتوبر میں ان تحقیقات کے شائع ہونے کے بعد سے مریضوں نے ان ادویات کے استعمال سے گریز کیا ہو گا۔

برٹش میڈیکل جرنل کی مدیر ڈاکٹر فیونا کوڈلی نے کہا کہ ان مقالہ جات کو جریدے میں سے اس لیے نکالا جا رہا ہے کہ ’ایسے مریض جنھیں سٹیٹن لینے سے کوئی فائدہ مل سکتا ہے وہ اس خدشے کے تحت کہ سٹیٹن مضرِ صحت ہیں، اپنا علاج شروع کرنے یا جاری رکھنے سے گریز کریں گے۔‘

برطانیہ میں سٹیٹن ان افراد کو دی جاتی ہیں جن میں اگلے دس سالوں میں دل کے امراض ہونے کا 20 فیصد امکان ہو۔ یہ بھی تحقیق کی جا رہی ہے کہ سٹیٹن ادویات کی مدد سے کس طرح دل کے امراض کو روکا جا سکتا ہے۔

اکتوبر میں اس برطانوی جریدے میں ہارورڈ میڈیکل اسکول کے ڈاکٹر جان ابریمسن اور برطانوی کارڈیالوجسٹ ڈاکٹر اسیم ملہوترا نے یہ تحقیق شائع کی جس میں کہا گیا تھا کہ سٹیٹن استعمال کرنے والے 20 فیصد مریضوں کے لیے یہ مضرِ صحت ہیں۔

طبی محقق پروفیسر سر روری کولینز نے مارچ میں اس تحقیق کے خلاف سوالات اٹھائے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس تحقیق سے سٹیٹن کے مضر اثرات کو 20 گنا بڑھا کر بتایا گیا ہے۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا سٹیٹن لینا صحت کے لیے فائدہ مند ہے تو انھوں نے کہا کہ ایک لاکھ سے زیادہ افراد پر تحقیق کے بعد یہ ثابت ہوا ہے کہ سٹیٹن استعمال کرنے والوں کو ذیابیطس لاحق ہونے کا بہت معمولی سا خطرہ ہو سکتا ہے اور ان میں پٹھوں کے بھی معمولی مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔

تاہم ان مضر اثرات کے مقابلے پر سٹیٹن ادویات سے دل کے مریضوں کو پہنچنے والے فوائد کہیں زیادہ ہیں۔

طبی ماہرین بہت دیر سے سٹیٹن کے فوائد پر تحقیق کر رہے ہیں۔ مارچ 2012 میں ہونے والی ایک تحقیق نے ثابت کیا تھا کہ وہ افراد جن میں دل کے امراض لاحق ہونے کے امکان کم ہیں، انھیں بھی سٹیٹن لینے سے فائدہ ہو گا۔

اسی بارے میں