خود سے چلنے والی گاڑیاں ایک سال میں آ جائیں گی: گوگل

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

گوگل کمپنی نے اعلان کیا ہے کہ وہ خود سے چلنے والی گاڑیاں تیار کرے گی بجائے اس کے کہ وہ دوسری کمپنیوں کی تیار کردہ گاڑیوں کو تبدیل کرے۔

گوگل کمپنی کا کہنا ہے کہ اس گاڑی میں سٹاپ اور گو یعنی چلنے کا بٹن تو ہو گا لیکن نہ تو اس میں سٹیئرنگ ہو گا اور نہ ہی ریس اور بریک کے پیڈل ہوں گے۔

گوگل کی جانب سے جاری کردہ اس گاڑی کی تصویر میں واضح ہے کہ یہ ایک عام سی گاڑی کی طرح کی ہو گی تاکہ لوگ اس ٹیکنالوجی سے گھبرائیں نہیں۔

اس بات کا اعلان گوگل کے شریک بانی سرجی برِن نے کیلیفورنیا میں ہونے والی کانفرنس میں کیا۔

گوگل کے خود سے چلنے والی گاڑی کے پراجیکٹ کے ڈائریکٹر کرس ارمسن نے کہا ’ہم اس گاڑی کے حوالے سے بہت پرجوش ہیں۔ اس گاڑی سے ہم خود سے چلنے والی ٹیکنالوجی کو مزید بہتر کر سکیں گے اور اور ہمیں اس کی حد کا بھی معلوم چلے گا۔‘

تاہم اس بارے میں کام کرنے والے چند تحقیق دان اس ٹیکنالوجی کے نقصانات پر بھی کام کر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس گاڑی کا سامنے والے حصے میں فوم لگایا گیا ہے تاکہ پیدل چلنے والے افراد کے لیے محفوظ بنایا جا سکے

ان تحقیق دانوں کا کہنا ہے کہ خود سے چلنے والی گاڑیوں کے متعارف ہونے سے شہری علاقوں میں ٹریفک مزید خراب ہو گی کیونکہ لوگ لمبی ڈرائیو پر زیادہ جانے لگیں گے کیونکہ ان کو خود گاڑی نہیں چلانی ہو گی۔

گوگل کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ پہلے 100 گاڑیاں تیار کرے گی۔

کمپنی کے مطابق اس گاری میں دو افراد سوار ہو سکیں گے اور شروع میں اس گاڑی کی حد رفتار 40 کلومیٹر فی گھنٹے ہو گی۔

اس گاڑی کے ٹیسٹ کے لیے سٹیئرنگ ہو گا تاکہ کسی دشواری کی صورت میں ٹیسٹ ڈرائیور گاڑی کو کنٹرول کر سکے۔

اس گاڑی میں شروع میں کنٹرول دیے جائیں گے جو کہ لوگوں کے اعتبار کے بحال ہونے کے ساتھ ساتھ ہٹا دیے جائیں گے۔

اس گاڑی کا سامنے والے حصے میں فوم لگایا گیا ہے تاکہ پیدل چلنے والے افراد کے لیے محفوظ بنایا جا سکے۔ اس کے علاوہ اس گاڑی کی ونڈ سکرین بھی لچکدار ہو گی تاکہ اس سے نقصان کم ہو۔

یہ گاڑی شعائیں اور ریڈار سینسر کے ساتھ ساتھ کیمرے سے معلوم کی جانے والی معلومات کا استعمال کرے گی۔

یہ گاڑی گوگل کمپنی کے سڑکوں کے نقشے کا استعمال کرے گی جو کہ اس گاری کے لیے خاص طور پر تیار کیا گیا ہے اور گوگل موجودہ گاڑیوں میں یہی نقشہ استعمال کر رہی ہے۔

گوگل کا کہنا ہے کہ ایک سال کے اندر یہ گاڑیاں سڑکوں پر ہوں گی۔

واضح رہے کہ اس سے قبل گوگل نے اعلان کیا تھا کہ اس کی خود سے چلنے والی گاڑیوں نے سات لاکھ میل کا سفر کر لیا ہے اور یہ گاڑیاں اب شہر کی مصروف سڑکوں پر سفر کر رہی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس سے قبل گوگل نے اعلان کیا تھا کہ اس کی خود سے چلنے والی گاڑیوں نے سات لاکھ میل کا سفر کر لیا ہے اور یہ گاڑیاں اب شہر کی مصروف سڑکوں پر سفر کر رہی ہیں

اسی بارے میں