گھوڑوں کے گھومتے کان

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption دوسرے جانوں کے طرح گھوڑے بھی اپنے حملہ آور کا تعین کرسکتے ہیں اور اپنے کان 180 ڈگری تک گھما سکتے ہیں

جانوروں کے حساس کان عموماً انھیں شکاری جانوروں کے بارے میں پہلے سے خبردار کر دیتے ہیں۔ لیکن ایک نئی تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ گھوڑے دوسرےگھوڑوں کے کانوں پر یہ جاننے کے لیے توجہ دیتے ہیں کہ وہ کیا سوچ رہے ہیں۔

برطانوی یونیورسٹی سسیکس کے محققوں کے مطابق گھوڑوں کے گھومتے کان اطلاعات کی ترسیل کے بہت کارآمد آلات ہیں۔

یہ تحقیق سائنس جرنل ’کرنٹ بایالوجی‘ میں شائع کی گئی ہے۔

یہ تحقیقی ٹیم عموماً جانوروں کے رویوں اور سماجی ہم آہنگی کے ارتقا پر کام کرتی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ انھیں یہ جاننے میں دلچسپی ہے کہ گھوڑے ایک دوسرے سے کس طرح رابطہ قائم کرتے ہیں۔

تحقیقاتی ٹیم کی سربراہ پروفیسر جینیفر واتھن کا کہنا ہے کہ ’دوسرے گھوڑے سے باخبر رہنا ان کے آپس میں بنیادی مواصلاتی نظام کو سمجھنے کے لیے ضروری ہے اور اسی سے دوسرے پیچیدہ سماجی روابط جنم لیتے ہیں۔‘

واتھن اور ان کی ساتھی محققین نے اس تحقیق میں 72 گھوڑے استعمال کیے۔

ان گھوڑوں کو انفرادی طور پر دوسرے گھوڑوں کے اشاروں کا تعین کرنا تھا۔ کچھ تجربوں میں گھوڑوں کے کانوں پر پٹی بھی باندی گئی۔

دوسرے جانورں کے طرح گھوڑے بھی اپنے حملہ آور کا تعین کرسکتے ہیں اور اپنے کان 180 ڈگری تک گھما سکتے ہیں۔

پروفیسر واتھن کا کہنا ہے کہ اب تک اس بات پر توجہ نہیں دی گئی کہ جانوروں کے کان مواصلاتی نظام میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔

انھوں نے کہا: ’ایسا لگتا ہے کہ ان کے کان اور آنکھ جب کسی سمت کا تعین کرتے ہیں تو اس سے ہمیں بصری اشارے ملتے ہیں۔‘

’گھوڑوں کی سماجی زندگی اور ان کے اپنے ساتھی گھوڑوں سے روابط بہت بامعنی ہوتے ہیں، اسی وجہ سے ان پر اس معاملے میں تحقیق بہت دلچسپ ثابت ہوئی ہے۔‘

اسی بارے میں