بوٹاکس انجیکشن کینسر کے علاج میں بھی معاون

تصویر کے کاپی رائٹ science photo library
Image caption بوٹاکس کو عموماً بڑھاپے کی علامات یعنی جھریوں کے خاتمے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے نہ کہ کینسر کے علاج کے لیے

جانوروں پر کی جانے والی ایک تحقیق سے ظاہر ہوا ہے کہ چہرے کی جھریوں کو ختم کرنے کے لیے استعمال ہونے والا بوٹاکس انجیکشن کینسر کے علاج میں معاون ثابت ہو سکتا ہے۔

سائنس ٹرانسلیشنل میڈیسن میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق اعصاب معدے کے کینسر کو بڑھنے میں مدد دیتے ہیں۔

تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ اعصاب شکن دوا بوٹاکس معدے کی رسولی کو بڑھنے سے سے روک دیتی ہے اور اسے کیمو تھیرپی کے عمل کے لیے مزید کمزور بنا دیتی ہے۔

برطانیہ کے کینسر ریسرچ کے ادارے کا کہنا ہے کہ یہ ابتدائی نتائج ہیں اور بھی یہ واضح نہیں ہے کہ آیا یہ انجیکشن زندگیاں بچانے میں معاون ثابت ہو سکتا ہے یا نہیں۔

بوٹاکس کو عموماً بڑھاپے کی علامات یعنی جھریوں کے خاتمے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے نہ کہ کینسر کے علاج کے لیے۔

بوٹاکس اعصاب کے عمل میں خلل ڈال کر پٹھوں کو پرسکون کرتا ہے اور جھریوں کو ختم کرتا ہے، تاہم تازہ ترین تحقیق سے معلوم ہوتا ہے یہی اعصاب کینسر کی نشوونما میں بھی مدد دیتے ہیں۔

سائنس دانوں نے دماغ اور نظامِ انہضام کے درمیان کام کرنے والی ویگس نرو کے معدے کے کینسر کی نشو و نما میں کردار پر تحقیق کی۔

تجربے سے ثابت ہوا کہ اس عصبیے کو کاٹ دینا یا اسے بوٹاکس کے استعمال سے سُن کر دینے سے معدے کے اندر سرطانی رسولی کی افزائش میں کمی واقع ہو جاتی ہے اور اس پر کیمو تھراپی زیادہ موثر ہو جاتی ہے۔

تاہم تجربے میں شامل ایک سائنس دان ڈاکٹر ٹموتھی وینگ نے بی بی سی کو بتایا کہ ’اگر آپ صرف ویگس نرو کو کاٹ دیتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ کینسر کا تدارک ہوگیا تو شاید ایسا نہیں ہے۔‘

بعض افراد میں اس دوا کے تجربات کیے جا رہے ہیں جن کے معدے کے کینسر کے لیے آپریشن کیے جانے ہیں۔

اسی بارے میں