صحت یاب ہونے والے مریضوں کے خون سے ایبولا کا علاج

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ڈبلیو ایچ او نے یہ بھی اعلان کیا کہ ایبولا کی ویکسین کا نومبر تک استعمال شروع کیا جا سکتا ہے

عالمی ادارہ صحت ڈبلیو ایچ او نے اعلان کیا ہے کہ ایبولا سے صحتِ یاب ہونے والے مریضوں کے خون سے تیار کردہ ویکسین کے ذریعے دیگر مریضوں کا علاج کرنا چاہیے۔

مغربی افریقہ میں اتنے بڑے پیمانے پر ایبولا کی وبا پھیلی ہوئی جس کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی اور جس میں 2000 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

بین الاقوامی ماہرین کا ایک گروپ ایبولا پر قابو پانے کے لیے کیے گیے مختلف تجرباتی طریقوں کا جائزہ لیتے رہے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او نے یہ بھی اعلان کیا کہ ایبولا کی ویکسین کا نومبر تک استعمال شروع کیا جا سکتا ہے۔

مریضوں کے خون میں ابیولا کے انفیکشن کے خلاف اینٹی باڈیز پیدا ہوتے ہیں۔ تھیوری یا نظریاتی طور پر ایبولا سے صحت یاب مریض سے لیے گئے ان اینٹی باڈیز کو ابیولا کے شکار مریضوں میں منتقل کیا جا سکتا ہے تاکہ ان کی قوتِ مدافعت میں اضافہ ہو۔

تاہم ابیولا کے اس طریقۂ علاج کے مؤثر ہونے کے لیے بڑی مقدار میں ڈیٹا موجود نہیں ہے۔

جمہوریہ کانگو میں سنہ 1995 میں ایبولا کی وبا پر کی جانی والی تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ اس طریقۂ علاج سے ایبولا کے آٹھ میں سات مریض زندہ بچ کر صحتِ یاب ہوئے۔

ڈبلیو ایچ او میں ایک نائب ڈئریکٹر جنرل ڈاکٹر ماری پال کینی نے کہا کہ ’یہ ایک موقع ہے کہ خون سے تیار کردوا کو استعمال کیا جا سکتا ہے اور مریضوں کا علاج کرنے میں بہت مؤثر ہو سکتا ہے۔‘

انھوں نے خون سے دوا تیار کرنے کی طرف اشارہ کیا کہ اتنے بڑے پیمانے پر لوگوں کا ایبولا کا شکار ہونے کا یہ ایک مثبت پہلو ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اب اتنے زیادہ لوگ ہیں جو ایبولا سے زندہ بچ گئے ہیں اور اچھی صحت کے مالک ہیں۔ وہ دوسرے بیمار لوگوں کے علاج کے لیے خون دے سکتے ہیں۔‘

ایبولا کے علاج کے لیے اب تک کوئی منظور شدہ دوا یا ویکسین تیار نہیں کی گئی اور اس کے لیے بہت سی ادویات تجربات کے مرحلے میں ہیں۔

تقریباً 150 ماہرین نے گذشتہ دو دن اس تحقیق میں گزارے کہ کس طرح جلد از جلد تجربات کے مراحل میں سے گزرنے والی ادویات میں کوئی مؤثر دوا دریافت کرکے اسے مغربی افریقہ میں بھیجا جائے۔

ایبولا کے لیے ویکسین کے لیے تجربات اس ہفتے امریکہ میں شروع کیے گئے اور آئندہ ہفتوں میں برطانیہ، مالی اور گمبیا میں بھی یہ تجربات شروع کر دیے جائیں گے۔

اسی بارے میں