سیارچے کا زمین کے قریب سے سفر

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption ناسا آج کل نسبتاً زمین کے قریب سے گزرنے والے تقریباً 11 ہزار سیارچوں پر نظر رکھے ہوئے ہے

امریکی خلائی ایجنسی ناسا کا کہنا ہے کہ ایک گھر کے حجم کے برابر سیارچہ سی آر 2014 کرۂ ارض کے قریب سے گزرا ہے۔

18 میٹر قطر والا یہ سیارچہ اتوار کو زمین کے بہت ہی قریب نیوزی لینڈ کے اوپر سے گزرا۔

ناسا کا کہنا ہے کہ یہ سیارچہ زمین سے 40 ہزار کلومیٹر کے فاصلے پر سے گزرا اور اس سے کرۂ ارض کو کوئی خطرہ نہیں تھا۔

تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ اتوار کو نیکاراگوا کے دارالحکومت ماناگیوا کے قریب جو شہابیہ گرا تھا تو وہ شاید اسی سیارچے کا حصہ ہو سکتا ہے۔

اس شہابیے کے گرنے کی وجہ سے ایک بڑا دھماکا ہوا اور زلزلے کے جھٹکے پیدا ہوئے اور پانچ میٹر گہرا اور 12 میٹر چوڑا گڑھا پیدا ہو گیا۔

نیکاراگوا میں آتش فشاں کے ماہر ہیوبرٹو گریشیا نے کہا کہ ’یہ شہابیہ اس سیارچے کا حصہ ہو سکتا ہے کیونکہ اس طرح ہونا عام سی بات ہے۔ ہمیں اس کا مزید مطالعہ کرنا ہے کیونکہ یہ پتھر یا برف کا بنا ہو سکتا ہے۔‘

ناسا کے مطابق اس سیارچے کا زمین کے قریب سے گزرنے کو سب سے پہلے 31 اگست کو دریافت کیا گیا تھا۔

توقع ہے کہ یہ سیارچہ مستقبل میں دبارہ کرۂ ارض کے گرد چکر لگائے۔

گذشتہ سال فروری میں مرکزی روس میں اسی حجم کا شہابیہ دھماکے کے ساتھ پھٹ گیا تھا جس سے 1000 سے زائد افراد زخمی ہوئے تھے۔

ناسا آج کل نسبتاً زمین کے قریب سے گزرنے والے تقریباً 11 ہزار سیارچوں پر نظر رکھے ہوئے ہے۔

اسی بارے میں