ذیابیطس کے علاج میں ’زبردست پیش رفت‘

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption سائنس دانوں نے سٹیم سیلز کو انسولین بنانے والے فعال بیٹا خلیوں میں منتقل کر دیا

سائنس دانوں نے کہا ہے کہ ذیابیطس درجہ اول کے علاج میں ’زبردست پیش رفت‘ ہوئی ہے۔

یہ بیماری اس وقت پیدا ہوتی ہے جب جسم کا دفاعی نظام خود ہی ان خلیوں پر حملہ آور ہو جاتا ہے جو خون میں شکر کی مقدار کو قابو میں رکھتے ہیں۔

ہارورڈ یونیورسٹی کے سائنس دانوں کی ایک ٹیم نے سٹیم سیلز کی مدد سے تجربہ گاہ میں لاکھوں خلیے تخلیق کرنے کا تجربہ کیا۔

ذیابیطس: ایشیا کا خاموش قاتل

چوہوں پر کیے گئے تجربات سے معلوم ہوا کہ یہ خلیے ذیابیطس کا علاج کر سکتے ہیں۔ سائنس دانوں نے اسے ’ایک اہم ممکنہ طبی پیش رفت‘ قرار دیا ہے۔

لبلبے کے اندر موجود بیٹا خلیے انسولین بناتے ہیں جو خون میں شکر کی مقدار کو ایک خاص حد کے اندر رکھتے ہیں۔ لیکن بعض اوقات جسم کا اپنا دفاعی نظام ان بیٹا خلیوں کے خلاف حرکت میں آ کر انھیں تباہ کر ڈالتا ہے۔

اس سے ذیابیطس درجہ اول کی مہلک بیماری جنم لیتی ہے جس کے مریض جسم میں شکر کی مقدار کو کنٹرول نہیں کر سکتے۔

ذیابیطس درجہ دوم ایک اور بیماری ہے جو نسبتاً زیادہ عام ہے اور اس کی بڑی وجہ غیر صحت مندانہ طرزِ زندگی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بعض اوقات جسم کا اپنا دفاعی نظام انسولین بنانے والے خلیوں کو تباہ کر ڈالتا ہے جس سے ذیابیطس کی بیماری جنم لیتی ہے

ہارورڈ یونیورسٹی کے سائنس دانوں کی ٹیم کے سربراہ پروفیسر ڈگ میلٹن 23 سال قبل اس وقت اس بیماری کا علاج ڈھونڈنے کے لیے سرگرم ہو گئے تھے جب ان کے اپنے بیٹے میں اس مرض کی تشخیص ہوئی تھی۔ اس کے بعد ان کی ایک بیٹی پیدا ہوئی اور اسے بھی یہی مرض لاحق تھا۔

ان کی کوشش ہے کہ سٹیم سیل ٹیکنالوجی کی مدد سے جسم کے اندر سے تباہ ہونے والے 15 کروڑ بیٹا خلیوں کی تجدید کی جا سکے۔

اس مقصد کے لیے انھوں نے کیمیائی اجزا کا ایک ایسا مرکب دریافت کیا جو سٹیم سیلز کو فعال بیٹا خلیوں میں بدلنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

ذیابیطس درجہ اول میں مبتلا چوہوں پر کیے جانے والے تجربات سے ظاہر ہوا کہ تجربہ گاہ میں تیار کردہ بیٹا خلیے کئی ماہ تک انسولین تیار کر کے خون میں شکر کی مقدار کو مقررہ حد کے اندر رکھ سکتے ہیں۔

ڈاکٹر میلٹن نے کہا: ’یہ جاننا بہت اطمینان بخش ہے کہ ہم وہ کام کر سکتے ہیں جس کے بارے میں ہمارا ہمیشہ سے خیال تھا کہ ایسا ممکن ہے۔

اب ہم آخری مرحلے سے صرف ایک پری کلینیکل ٹرائل کی دوری پر ہیں۔‘

تاہم ان کے بچے کچھ زیادہ متاثر نظر آئے: ’میرا خیال ہے کہ تمام بچوں کی طرح انھوں نے بھی ہمیشہ کی طرح یہ فرض کر لیا تھا کہ اگر میں نے کہ دیا کہ میں یہ کروں گا تو واقعی کر گزروں گا۔‘

اس ضمن میں مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔

سارا جانسن اس خیراتی ادارے سے تعلق رکھتی ہیں جنھوں نے اس تحقیق کے لیے سرمایہ فراہم کیا تھا۔ انھوں نے بی بی سی کو بتایا: ’یہ حتمی علاج نہیں ہے، تاہم یہ اس راستے پر ایک اہم قدم اور زبردست پیش رفت ہے۔‘

پروفیسر کرس میسن یونیورسٹی کالج لنڈن میں سٹیم سیلز پر تحقیق کرتے ہیں۔ انھوں نے کہا: ’یہ ایک ممکنہ طور پر ایک اہم سائنسی پیش رفت ہے کیوں کہ اس میں بڑے پیمانے پر فعال خلیے تیار کیے گئے ہیں جو ہر قسم کی ذیابیطس کا علاج کر سکتے ہیں۔

’اگر یہ ٹیکنالوجی کلینک اور کارخانے دونوں میں کامیابی سے کام پائے تو اس کا ذیابیطس کی بیماری پر ویسا ہی اثر ہو گا جیسا جراثیم پر اینٹی بائیوٹک کا ہوا تھا۔‘

اسی بارے میں