’صارفین کی ذاتی معلومات اور حساس آلات‘

Image caption حساس آلات صارفین سے متعلق ذاتی معلومات جمع کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

امریکہ کے وفاقی تجارتی کمیشن کی سربراہ نے خبردار کیا ہے کہ ایسا ممکن ہے کہ مستقبل میں حساس آلات (گیجٹس) صارفین کے متعلق انتہائی ذاتی نوعیت کے اعداد و شمار جمع کر سکیں گے۔

ایھڈت رامیرز کا کہنا ہے کہ اس سے ذاتی معلومات کی حفاظت کے لیے خطرہ ہوسکتا ہے اور اگر یہ معلومات آجروں، یونیورسٹیوں یا کمپنیوں کے ہاتھ لگ جائیں تو کسی بھی شخص کے متعلق غلط تاثر پیدا کر سکتی ہیں۔

انھوں نے ٹیکنالوجی فرموں پر زور دیا کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ آلات صارفین سے متعلق ذاتی معلومات حسبِ ضرورت اور کم سے کم جمع کریں۔

ایھڈت رامیرز کے مطابق مستقبل میں یہ آلات گھروں، گاڑیوں اور دفتروں سمیت ہر جگہ موجود ہوں گے اور صارفین کے بارے میں خطرناک حد تک ذاتی معلومات جمع کر سکیں گے۔

ان معلومات سے کسی بھی شخص کی صحت، مذہبی ترجیحات، خاندان، دوستوں اور مالی حالت کے بارے میں پتا چلایا جاسکے گا۔

ایھڈت کا مزید کہنا تھا کہ ’مثال کے طور پر سمارٹ ٹی وی سیٹ یہ ریکارڈ کر سکتے ہیں کہ صارف کو کون سا چینل پسند ہے اور دیگر آلات بھی آپ کی پسند اور ناپسند کو ریکارڈ کر سکتے ہیں، یہ معلومات پھر دوسری کمپنیوں کو مہیا کی جاسکتی ہیں، جو صارف کے لیے نقصان دہ بھی ہوسکتا ہے۔‘

وفاقی تجارتی کمیشن کی سربراہ نے اس بات کا بھی اعتراف کیا کہ اس میں کو شک نہیں کہ ان معلومات سے صحت کو بہتر بنانے اور اقتصادی ترقی کو فروغ دینے میں مدد ملے گی لیکن اس کے ساتھ کی لوگوں کی ذاتی معلومات کی حفاظت بھی ضروری ہے۔

ایھڈت رامیرز نے اس بات پر زور دیا کہ ذاتی معالومات کو صرف کسی خاص مقصد کے لیے ہی جمع کرنا چاہیہے اور ان کی حفاظت ضروری ہے نہیں تو کمپنیاں ممکنہ گاہکوں کا اعتماد کھو دیں گی۔

اسی بارے میں