گرل فرینڈ سے زیادہ کمپیوٹر سمجھتا ہے

کمپیوٹر آپ کی شخصیت کو اہل خانہ اور دوستوں سے بہتر سمجھ سکتے ہیں یہ دعویٰ ہزاروں لوگوں پر کی گئی ایک تحقیق کے بعد محققین نے کیا ہے۔

فیس بک پر ’لائک‘ کی بنیاد پر ایک کمپیوٹر ماڈل نے جن پانچ خصوصیات کا اندازہ لگایا، وہ بھائیوں، ماؤں اور جیون ساتھیوں (میاں بیوی، عاشق یا گرل فرینڈ) سے زیادہ عین مطابق تھے۔

کیمبرج یونیورسٹی کے محققین کا کہنا ہے کہ انسان کی شخصیت اس سے زیادہ پیچیدہ ہوتی ہے لیکن جس جریدے میں یہ تحقیق شائع ہوئی اس میں یہ لکھا گیا ہے کہ کمپیوٹر انسان سے آگے نکل سکتا ہے۔

کیمبرج یونیورسٹی اور سٹینفرڈ یونیورسٹی کے محققین پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ فیس بک ’لائکس‘ سے کسی کی ذاتی معلومات جیسے جنسی جھکاؤ اور سیاسی پسند کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔

ڈاکٹر يويو اور ان کے ساتھیوں نے 70،520 ٹوئٹر صارفین کے اعداد و شمار ان کے کمپیوٹر سسٹم میں ڈالے جس نے ’لائكس‘ کو پانچ درجہ بندیوں میں پرکھا۔

فیس بک صارفین کو ایک شخصیت کے حوالے سے سوالنامہ بھرنے کو کہا گیا اور اپنے ساتھیوں، دوستوں اور اہل خانہ سے ایک سروے کے دوران کردار کا مشاہدہ کرنے کو کہا گیا۔

اس کے بعد محققین نے ان نتائج کا کمپیوٹر ماڈل کے نتائج سے مقابلہ کیا اور لائكس کی بنیاد پر کمپیوٹر ماڈل شخص کی اپنی رپورٹ کے قریب ترین تھا۔

اس سے نتیجے نکلا کہ صرف دس فیس بک ’لائكس‘ دیکھ کر کمپیوٹر کسی ہم مرتبہ کے جائزہ کے قریب ترین پہنچ گیا تھا اور ستر ’لائكس‘ کے جائزہ کے بعد کمپیوٹر دوست یا ساتھ رہنے والے شخص کی سمجھ بوجھ کے قریب ترین پہنچ چکا تھا۔

اس کے بعد 150 لائکس کے بعد کمپیوٹر نے اہل خانہ کو بھی پیچھے چھوڑ دیا لیکن زندگی کے ساتھی کی سمجھ کو پیچھے چھوڑنے کے لیے اسے 300 لائکس تک ڈیٹا کو جانچنا پڑا۔

ڈاکٹر یو جو فیس بک میں ایک وزٹنگ انٹرن اور کیمبرج یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی کے طالب علم ہیں کہتی ہیں کہ اوسطاً ٹویٹر صارف اپنے پروفائل پر قریب 227 فیورٹس کرتا ہے جو کمپیوٹر کے تعین کے لیے کافی ہے۔

وہ کہتی ہیں کہ آج کل لوگ آن لائن بہت وقت گزارتے ہیں اور اس سے کمپیوٹر کو سمجھنے میں فائدہ ہوتا ہے۔

اسی بارے میں