خودکار گاڑی پانچ برس میں سڑکوں پر ہوگی

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption گوگل کی جانب سے متعارف کرائی جانے والی ابتدائی نمونہ گاڑی مکمل طور پر خود کار ہے

گوگل کی خود سے چلنے والی گاڑی کے منصوبے کے سربراہ کرس آرمسن نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ اگلے پانچ برس میں یہ ٹیکنالوجی سڑکوں پر ہو گی۔

انھوں نے ٹیڈ (ٹیکنالوجی، انٹرٹینمنٹ اور ڈیزائن) کانفرنس کے مندوبین کو بتایا کہ ’میرا بڑا بیٹا 11 سال کا ہے اور چار سال بعد اس نے ڈرائیونگ کا امتحان دینا ہے، میری ٹیم کی پوری کوشش ہے کہ ایسا نہ ہو۔‘

انھوں نے مکمل خودکار گاڑی بنانے کے گوگل کے عزم کا بھی اعادہ کیا۔

کچھ کاریں بنانے والی کمپنیوں نے اپنی گاڑیوں میں ڈرائیور کی مدد (ڈرائیو اسسٹ) کے لیے چند خود کار فیچر متعارف کرائے ہیں تاکہ لوگوں کو آہستہ آہستہ مکمل خود کار گاڑیوں کے استمعال کرنے پر قائل کیا جاسکے۔

اس کے برعکس دسمبر میں گوگل کی جانب سے متعارف کرائی جانے والی ابتدائی نمونہ گاڑی مکمل طور پر خود کار ہے مگر اس میں اضافی کنٹرول نصب کیے گئے ہیں تاکہ کسی بھی مسئلے کی صورت میں گوگل کے ڈرائیور اس پر کنٹرول حاصل کرلیں۔

کرس آرمسن کا کہنا تھا کہ اس ٹیکنالوجی کو جلد سے جلد لانا اس لیے ضروری ہے کہ زیادہ لوگ اب گاڑیاں چلا رہے ہیں اور زیادہ دیر تک لوگ ٹریفک جام میں بھی پھنسے رہتے ہیں۔ مگر سب سے اہم چیز یہ ہے کہ خودکار گاڑیاں حادثوں میں کمی کا باعث بنیں گی۔

’ ہر سال تقریباً 12لاکھ افراد دنیا میں سڑک کے حادثوں کے باعث ہلاک ہوجاتے ہیں یہ ایسا ہی ہے کہ جیسے ہر روز ایک طیارہ گر کر تباہ ہوجائے۔کچھ کاریں بنانے والی کمپنیوں نے جو ڈرائیو اسسٹ فیچر متعارف کرائے ہیں وہ ناکافی ہیں۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’ میں یہ نہیں کہتا کہ ڈرائیو اسسٹ فیچر کار آمد نہیں ہیں لیکن اگر ہم حقیقی معنوں میں اپنے شہروں میں تبدیلی چاہتے ہیں تو ہمیں خود سے چلنے والی گاڑیاں لانی ہوں گی۔‘

گوگل کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ پہلے 100 گاڑیاں تیار کرے گی۔

کمپنی کے مطابق اس گاری میں دو افراد سوار ہو سکیں گے اور شروع میں اس گاڑی کی حد رفتار 40 کلومیٹر فی گھنٹے ہو گی۔

اس گاڑی کا سامنے والے حصے میں فوم لگایا گیا ہے تاکہ پیدل چلنے والے افراد کے لیے محفوظ بنایا جا سکے۔ اس کے علاوہ اس گاڑی کی ونڈ سکرین بھی لچکدار ہو گی تاکہ اس سے نقصان کم ہو۔

یہ گاڑی شعائیں اور ریڈار سینسر کے ساتھ ساتھ کیمرے سے معلوم کی جانے والی معلومات کا استعمال کرے گی۔

واضح رہے کہ اس سے قبل گوگل نے اعلان کیا تھا کہ اس کی خود سے چلنے والی گاڑیوں نے سات لاکھ میل کا سفر کر لیا ہے اور یہ گاڑیاں اب شہر کی مصروف سڑکوں پر سفر کر رہی ہیں۔

اسی بارے میں