بھارت میں فضائی آلودگی سے آگاہ کرنے والا نظام

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption نئی دہلی میں فضائی آلودگی کی سطح بیجنگ سے ڈھائی گنا زیادہ ہے

بھارت میں حکومت نے دارالحکومت دہلی سمیت ملک کے دس بڑے شہروں میں فضائی آلودگی کے بارے میں فوری معلومات فراہم کرنے والا نظام شروع کیا ہے۔

آنے والے دنوں میں تمام ریاستوں کے دارالحکومت کو بھی اس نظام کے تحت لایا جائے گا۔

بھارت کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق دارالحکومت نئی دہلی نے دنیا کے سب سے آلودہ شہر بیجنگ کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

نئی دہلی میں فضائی آلودگی کی سطح بیجنگ سے ڈھائی گنا زیادہ ہے۔

انڈیکس کا مقصد کیا ہے؟

فضائی آلودگی کا مطلب ہوا میں نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ، سلفر ڈائی آکسائیڈ اور کاربن مونوآکسائیڈ کی مقدار عالمی ادارۂ صحت کی جانب سے طے کیے گئے معیار سے زیادہ ہونا ہے۔

آلودگی

اس نظام سے یہ بھی معلوم ہو گا کہ فضا کتنی خالص یا آلودہ ہے، یا پھر بہت ہی آلودہ ہے۔

اس سے لوگوں کو یہ بھی بتانے میں آسانی ہوگی کہ فضائی آلودگی کی سطح اگر عام ہے تو کیا کرنا چاہیے اور اگر خراب اور بہت ہی خراب ہے تو اس کا صحت پر کس طرح کا اثر پڑے گا؟

اس کے ذریعے یہ بھی بتایا جائے گا کہ ایسی صورت میں لوگوں کو کیا کیا اقدامات کرنے چاہئیں۔

آلودگی ایمرجنسی کے وقت کیا ہوگا؟

اس انڈیکس کا دوسرا مقصد آلودگی کی ایمرجنسی کا اندازہ لگانا اور فوری اقدامات کرنا ہے۔

بیجنگ، پیرس سمیت کئی ایسے شہر ہیں جہاں ’آلودگی سے نمٹنے کی ایمرجنسی‘ صورتحال ہے۔

اس ایمرجنسی کے دوران ان شہروں میں کچھ دیر کے لیے صنعتوں کو بند کرنے کے بعد سڑکوں پر ڈیزل کی گاڑیوں کی تعداد بھی کم کر دی جاتی ہے۔

یہ سب کچھ اس وقت تک ہوتا ہے جب تک آلودگی کی سطح کم نہ ہو جائے۔

مستقبل میں کیا ہوگا؟

یہ عوامی صحت کےحوالے سے لیا گیا ایک اہم قدم ہے جس سے کئی شہروں میں فضائی آلودگی پر نظر رکھنا ممکن ہو گا۔

اس کے ذریعے وقتاً فوقتاً لوگوں تک الرٹ بھیجنا ممکن ہو سکے گا۔

فضائی آلودگی کی غیر متوقع طور کی صورت میں مناسب قدم اٹھانا ممکن ہو سکے گا۔

اس نظام کے ذریعے لوگوں میں فضائی آلودگی کے حوالے سے بیداری پھیلانے میں بھی مدد مل سکے گی۔

اسی بارے میں