جنوبی کوریا میں ’مرس‘ سے چھٹی ہلاکت، 87 متاثر

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption مرس یا ’مڈل ایسٹ ریسپیریٹری سنڈروم‘ مشرق وسطی کے تنفس کے مسائل کا مخفف ہے

جنوبی کوریا میں مڈل ایسٹ ریسپریٹري سنڈروم سے ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد چھ ہوگئی ہے جبکہ اس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔

اتوار کو جنوبی کوریائی حکام نے تصدیق کی ہے کہ مزید 23 افراد میں یہ وائرس پایا گیا ہے یوں اب ملک میں مرس سے متاثرہ افراد کی کل تعداد 87 ہوگئی ہے۔

یہ مشرقِ وسطیٰ سے باہر کسی ملک میں ’مرس‘ کے پھیلاؤ کا سب سے بڑا واقعہ ہے۔

جنوبی کوریا میں اب تک 2300 افراد کو مرس کے مریضوں کے رابطے میں رہنے کی وجہ سے زیرِ نگرانی رکھا گیا ہے جبکہ 1900 سکول بند کر دیے گئے ہیں۔

پیر کی صبح ایک 80 سالہ شخص اس بیماری کی وجہ سے دارالحکومت سیئول کے جنوب میں دائجیون کے علاقے میں ہلاک ہوا۔

یہ ملک میں اس بیماری سے ہونے والی چھٹی ہلاکت ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP GETTY
Image caption جنوبی کوریا میں مرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے شہری خوف کا شکار ہیں اور بغیر ماسک پہنے گھر سے نہیں نکل رہے

اس سے قبل سنیچر کو بھی ایک 75 سالہ شخص سیئول میں ہی اس وائرس کا شکار بنا تھا۔

وزارتِ صحت کا کہنا ہے کہ نئے 23 مریضوں میں سے 17 کا تعلق اسی سام سنگ میڈیکل سنٹر سے ہے جہاں یہ شخص بھی زیر علاج تھا۔

جنوبی کوریا میں مرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے شہری خوف کا شکار ہیں اور بغیر ماسک پہنے گھر سے نہیں نکل رہے۔

مرس یا ’مڈل ایسٹ ریسپیریٹری سنڈروم‘ مشرق وسطی کے تنفس کے مسائل کا مخفف ہے یعنی یہ مرض اس علاقے سے مخصوص ہے۔

اس بیماری کے سب سے زیادہ معاملے سعودی عرب اور مشرق وسطیٰ کے دیگر ممالک میں سامنے آئے ہیں.

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مرس کے نئے 23 مریضوں میں سے 17 کا تعلق سام سنگ میڈیکل سنٹر سے ہے

مرس سے سب سے پہلی موت جون 2012 میں سعودی عرب میں ہوئی تھی۔

دنیا بھر میں مرس کے اب تک 1167 کیس سامنے آئے ہیں جن میں سے 479 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

ایشیا میں اس سے پہلے مرس سے موت کا سب سے پہلا معاملہ ملائیشیا میں سامنے آیا تھا جہاں سعودی عرب سے واپس آنے والا ایک شخص اپریل میں انتقال کر گیا تھا۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق اس انفیکشن کی زد میں آنے والے مریضوں میں سے 27 فیصد ہلاک ہو جاتے ہیں۔

اسی بارے میں