تھری ڈی پرنٹر سے جڑواں بہنوں کا آپریشن

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption بچیاں 17 مارچ کو مشرقی چین کے جیائنگزی صوبے میں پیدا ہوئی تھیں

چین میں ڈاکٹروں نے دو جڑواں بچیوں کو، جن کے جسم آپس میں جوڑے ہوئے تھے علیحدہ کرنے کے آپریشن میں تھری ڈی پرنٹنگ ٹیکنالوجی سے بھی مدد لی ہے۔

چینی خبرساں ادارے ژنہوا کے مطابق یہ بہنیں جن کی عمر تقریباً تین ماہ ہے کی کمر اور کہولے ایک دوسرے کے جسسم کے ساتھ جوڑے ہوئے تھے۔

منگل کو شنگھائی میں واقع فیوڈن یونیورسٹی کے بچوں کے ہسپتال میں، جو جڑواں بچوں کو الگ کرنے میں مہارت رکھتا ہے، ہونے والا ان بچیوں کا آپریشن پانچ گھنٹے تک جاری رہا۔

چائنا ڈیلی کے مطابق اس آپریشن کی تیاری کے سلسلے میں ڈاکٹروں نے بچیوں کے ایم آر آئی اور سی ٹی سکین ایک تھری ڈی پرنٹنگ کمپنی کو بھیجے تھے جن کی مدد سے کمپنی نے ان کے جڑواں عضا کے ماڈل بنا کر دیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ایک تھری ڈی پرنٹنگ کمپنی کو بھیجے تھے جن کی مدد سے کمپنی نے ان کے جوڑواں عضا کے ماڈل بنا کر دیے

ماڈلز سے ڈاکٹروں کو یہ سمجھنے میں مدد ملی کہ ان جڑواں عضا کو کیسے علیحدہ کیا جائے۔

ڈاکٹر زہنگ شان کا جو اس آپریشن کو کرنے والی ٹیم کے سربراہ تھے کہنا ہے کہ ’ اس سے ہمیں صیح مقام سے آپریشن شروع کرنے میں مدد ملی۔‘

چین کے سرکاری ٹی وی چینل سی سی ٹی وی کا کہنا ہے کہ اب بہنوں کو ہسپتال کے انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں منتقل کر دیا گیا ہے۔

جڑواں بچیاں 17 مارچ کو مشرقی چین کے جیائنگزی صوبے میں پیدا ہوئی تھیں اور پیدائش سے قبل ڈاکٹروں کو اندازہ نہیں تھا کہ ان کے کچھ عضا جوڑے ہوئے ہیں۔

واضع رہے کہ سنہ 2014 میں امریکی ڈاکٹروں نے ایک بچے کے دل کا جس میں سوراخ تھے تھری ڈی ماڈل پرنٹ کیا تھا تاکہ آپریشن سے پہلے اس کا معائنہ کیا جا سکے۔

اسی بارے میں