فلے کامیٹ لینڈر سے رابطہ ہو گیا

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption چونکہ دم دار تارہ سورج کے قریب آ گیا ہے چنانچہ فلے اب جیسے دوبارہ زندہ ہو گیا ہو

یورپ کے فلے کامیٹ لینڈر کا گذشتہ اتوار کے بعد آج دوبارہ زمین کے ساتھ رابطہ ہوا ہے۔

روزیٹا سے آنے والا سگنل امریکی خلائی ایجنسی کے کیلیفورنیا میں موجود گولڈسٹون اینٹینا نے موصول کیا اور پھر جرمنی میں یورپی خلائی ایجنسی کو بھجوایا۔

گذشتہ اختتامِ ہفتے سے پہلے فلے سات ماہ سے ’ہائیبرنیشن‘ میں یعنی بےحرکت تھا۔

بارہ نومبی کو سیارے پر اترنے کے ساٹھ گھنٹے بعد ہی اس میں تونائی ختم ہوگئی تھی کیونکہ سیارے پر اترتے وقت روبوٹ ایک کھائی میں جا گرا تھا جہاں اسے تونائی پیدا کرنے کے لیے سورج کی روشنی نہیں مل تھی۔

اب چونکہ دم دار تارہ سورج کے قریب آ گیا ہے چنانچہ فلے اب دوبارہ زندہ ہو گیا ہو۔

اس وقت زمین کا چیموو۔جراسیمنکو سے فاصلہ 305 ملین کلومیٹر ہے اور اس سے رابطہ دن میں چند ہی سکینڈز کے لیے قائم ہو سکتا ہے۔ اس مرحلے پر پہلا رابطہ سنیچر کو ہوا اور پھر اتوار کو، اور دونوں مرتبہ دو منٹ سے کم دیر تک رابطہ رہا۔ اس وقت میں صرف فلے کی حالت کے بارے میں معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں۔

روزیٹا کے مشن مینجر پیٹرک مارٹن کا کہنا ہے کہ ’ہمیں خوشی ہے کہ فلے سے ہمارا دوبارہ رابطہ قائم ہو گیا ہے اور ہماری کوشش ہے کہ فلے اور روزیٹا کے درمیان میں رابطہ مسلسل قائم رہے۔‘

اس وقت یورپی سپیس ایجنسی کا کہنا ہے کہ خلابازوں کی کوشش ہے کہ روزیٹا کو فلے سے قریب تر لایا جائے تاکہ اس سے رابطہ لمبے عرصے تک برقرار رہ سکے۔

امید کی جا رہی ہے کہ وقت کے ساتھ ساتھ فلے میں اس قدر تونائی ہوگی کہ وہ تحقیقی عمل کو جاری رکھ سکے۔

اس تحقیق کا مقصد دم دار ستارے میں سراغ کر کے اس کی تہہ کے کیمیائی مرکب کے بارے میں معلومات حاصل کی جائیں۔

اسی بارے میں