ہزاروں افراد کا سٹون ہینج پر سورج کا نظارہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پولیس کے مطابق طلوعِ آفتاب سے قبل، طلوع کے وقت اور بعد میں خوشی کی تقریبات دھوم دھام سے منائی گئیں

سورج کو اس سال بلند ترین مقام سے طلوع ہوتے ہوئے دیکھنےکے لیے برطانیہ میں سٹون ہینج کے مقام پر ہزاروں کی تعداد میں افراد جمع ہوئے۔

پولیس کے مطابق لگ بھگ 30 ہزار افراد نے سٹون ہینج میں جمع ہوکر یہ منظر دیکھا۔ سٹون ہینج برطانیہ کا وہ مقام ہے جہاں پتھر کے دور کے باقی رہ جانے والے کچھ آثار پائے جاتے ہیں۔اس مقام پر سنہ 2015 کا سورج جون کی اکیس تاریخ کو برطانیہ کے وقت کے مطابق صبح چار بجکر 52 منٹ پر طلوع ہوا۔

کچھ لوگوں نے یہ منظر سٹون ہینج سے جبکہ دیگر نے ایوبری کے حجری دائرہ کے قریب جمع ہو کر دیکھا۔

گذشتہ برس سورج کو دائرہ البروج میں اس کے بلند ترین مقام سے طلوع ہوتے دیکھنے کے لیے 36 ہزار افراد سٹون ہینج جمع ہوئے تھے اور توقع تھی کہ اس مرتبہ یہ تعداد تیس ہزار کے قریب ہوگی۔

پولیس کے مطابق طلوعِ آفتاب سے قبل، طلوع کے وقت اور بعد میں خوشی کی تقریبات دھوم دھام سے منائی گئیں اور یہ پُر امن رہیں۔

شمالی نصف کرے میں سورج بروج کی پٹی میں اپنے بلند تر نکتے پر عموماً ہر سال اکیس جون کو ہوتا ہے اور اسے سال کا سب سے طویل دن کہتے ہیں۔ لیکن سورج اس مقام پر بیس یا بائیس جون کو بھی پہنچ سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس مقام پر لامذہب افراد کا جمع ہو کر خوشیاں منانا بیسویں صدی سے شروع ہوا ہے

پولیس کے مطابق اس مرتبہ گذشتہ سالوں کی نسبت کم لوگوں کو گرفتار کیا گیا۔ جنھیں حراست میں لیا گیا ان پر سٹون ہینج میں منشیات کے استعمال کا الزام لگا جبکہ بعض کو ’اے‘ درجہ بندی کی منشیات رکھنے پر تنبیہ کی گئی۔ ایوبری میں کوئی گرفتاری نہیں ہوئی۔

شمالی نصف کرے میں اگلے برس سورج کا اپنے بلند ترین مقام سے گزر بیس جون کو ہوگا لیکن سنہ2203 تک سورج بائیس جون کو اپنے بلند ترین مقام پر نہیں ہوگا۔

سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ جب سورج اپنے بلند ترین مقام پر پہنچتا ہے تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ وہ وہاں رک ساگیا ہے۔

یہ دن سال کا طویل ترین دن ہوتا ہے اور دنیا بھر میں ہزاروں کی تعداد میں لا مذہب افراد اس موقع پر خوشیاں مناتے ہیں۔

خیال کیا جاتا ہے کہ آج سے چار ہزار سال سے زیادہ عرصہ قبل برطانیہ کے ابتدائی باشندوں نے سٹون ہینج کو مذہبی اہمیت دیتے ہوئے ایک یادگار کے طور پر استعمال کیا تھا۔

اس مقام پر لامذہب افراد کا جمع ہو کر خوشیاں منانا بیسویں صدی سے شروع ہوا ہے۔

جب سورج اپنے سفر کے دوران بلند ترین مقام پر پہنچتا ہے تو سٹون ہینج کا مرکزی آلٹر سٹون، ہِیل سٹون ، سلاٹر سٹون اور شمال مشرق سے نکلتے ہوئے سورج کے ساتھ سیدھ میں ہوتا ہے۔