خواتین کو زیادہ ٹھنڈ کیوں لگتی ہے؟

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption تحقیق کے مطابق خواتین کو سردی زیادہ لگتی ہے

حال ہی میں ایک تحقیق پر بحث کی جا رہی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ دفاتر میں مرد اور عورت درجۂ حرارت کو مختلف طور پر محسوس کرتے ہیں۔

کرس سٹوکل واکر نے اس سوال کا جواب جاننے کی کوشش کی ہے کہ کیا وجہ ہے کہ مرد اور خواتین مختلف درجہ حرارت کو آرام دہ تصور کرتے ہیں۔

یہ تحقیق نیدرلینڈ کے دو سائسدانوں نے کی ہے۔

یہ تحقیق طویل عرصے سے پو چھے جانے والے اس سوال کا جواب دیتی ہے کہ کیوں گرمیوں کے آتے ہی دفاتر میں کیوں کچھ مرد ایئر کنڈیشنر کے قریب بیٹھنا پسند کرتے ہیں جبکہ حواتین سویٹر پہن لیتی ہیں۔

تحقیق کے مطابق خواتین سردی کو زیادہ جلدی محسوس کرتی ہیں۔

تحقیق سے ظاہر ہوتا ہے کہ خواتین مردوں کے مقابلے میں ڈھائی ڈگری سینٹی گریڈ کم درجۂ حرارت میں، جو 24 سے 25 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان ہے، زیادہ آرام محسوس کرتی ہیں۔

وارک میڈیکل سکول کے پروفیسر پال تھورنالی کے مطابق خواتین اور مردوں میں اوسط میٹابولک ریٹ اور جسم کے درجۂ حرارت میں فرق ہی ’شاید وہ وجہ ہے جو ان کے آرام کے لیے موافق ماحول کے درجہ حرارت کے فرق کو ظاہر کرتی ہے۔‘

میٹا بولزم جسم میں توانائی، بشمول حرارت کی پیداوار اور نمو میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ آرام کی حالت میں خواتین کا اوسط میٹابولک ریٹ مردوں کے مقابلے میں کم ہوتا ہے۔

تھورنالی کے مطابق میٹابولک ریٹ کا تعلق جسم میں چربی والے حصوں کا کم ہونا بھی ہے اور کیونکہ مردوں کے جسم میں خواتین کے مقابلے میں چربی والے حصے کم ہوتے ہیں اس وجہ سے مردوں کا میٹابولک ریٹ زیادہ ہوتا ہے۔

تھورنالی نے جسم کے حصوں میں جلد، ہڈیاں اور پٹھے شامل کیے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ جسم کے اہم اعضا جگر، دماغ، پٹھے، گردے اور دل کو سب سے زیادہ توانائی کی ضرورت ہوتی ہے۔

خواتین کے مقابلے میں مردوں کا زیادہ وزن بھی ان کے جسم کا درجۂ حرارت بڑھانے میں مدد دیتا ہے جس کی وجہ سے وہ خواتین کے مقابلے میں اتنی جلدی سردی محسوس نہیں کرتے۔

اسی وجہ سے شدید گرمیوں میں ان کے اندر گرمی برداشت کرنے کی صلاحیت بھی کم ہوتی ہے کیونکہ ان کے جسم کا میٹابولک ریٹ ان کے جسم کا درجۂ حرارت بڑھا دیتا ہے۔

اسی بارے میں