’کتّوں کی نسل وسطی ایشیا سے چلی‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption مطالعے کے مطابق کتے وسطی ایشیا میں انسان کے دوست بنے

کتوں کی جینیات سے متعلق اب تک کیے جانے والے سب سے جامع سروے سے پتہ چلا ہے کہ دورِ حاضر کے کتوں کی نسل وسطی ایشیا سے شروع ہوئی تھی۔

کتا زمین پر پائے جانے والا سب سے متنوع جانور ہے، اور انسان ہزاروں برسوں سے ان کی افزائشِ نسل کرتا چلا آیا ہے۔

کتے دم کیوں ہلاتے ہیں؟

کتا دراصل بھیڑیوں کی نسل سے ہے، جنھیں انسانوں نے رفتہ رفتہ سدھایا۔ یہ کام سب سے پہلے نیپال یا منگولیا کے قریب ہوا۔

یہ نتائج ہزاروں کتوں کے ڈی این کے مشاہدے سے سامنے آئے ہیں، انھیں پی این اے ایس نامی سائنسی جریدے میں شائع کیا گیا ہے۔

کورنیل یونیورسٹی کے ڈاکٹر ایڈم بوئکو اور ان کے ساتھیوں نے4676 خالص النسل کتوں اور انسانی بستیوں میں گھومنے والے 549 آوارہ کتوں کے ڈی این اے کا مشاہدہ کیا۔

کتوں کو پالتو بنانے کا عمل دنیا کے مختلف حصوں میں ہو سکتا تھا لیکن دورِ جدید کے کتوں کے ڈی این اے سے اس خیال کی تصدیق نہیں ہوتی۔

ڈاکٹر بوئکو کا کہنا ہے کہ ’ہم نے خاص طور پر اس معاملے میں غور کیا ہے کہ آیا کہیں ایک سے زیادہ مقامات پر کتوں کو پالتو بنانے کے واقعات کے شواہد ملیں لیکن ہمیں اس بارے میں کوئی ثبوت نہیں ملے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption تحقیق کہتی ہے کہ دورِ حاضر کے کتے درحقیقت بھیڑیوں کی نسل سے ہیں

’ایسا معلوم ہوتا ہے کہ کتوں کا ماخذ ایک ہی جگہ پر ہوا۔ تاہم بعض معاملات میں کتوں کو پالتو بنانے کے بعد کے عرصے میں بھی کتوں اور بھیڑیوں کے جینز میں وقتاً فوقتاً اخطاط ہوتا رہا ہے۔‘

سائنس دانوں نے کتوں کے ڈی این اے میں ان جینز کا مطالعہ کیا جو کروموسومز پر ایک دوسرے کے قریب قریب واقع تھے۔

ان جینز کے پیٹرن کے تقابلی جائزے سے سائنس دانوں کی ٹیم کو معلوم ہوا کہ کتوں کو پالتو بنانے کا عمل سب سے پہلے وسطی ایشیا میں ہوا تھا۔

اس سے پہلے کی جانے والی تحقیقات سے اشارہ ملتا ہے کہ کتوں کا ماخذ وسطی ایشیا، مشرقی ایشیا یا پھر یورپ تھا۔

حالیہ نتائج سے یہ بحث ختم تو نہیں ہوتی لیکن ڈاکٹر بوئکو کا کہنا ہے کہ کتوں کے ماخذ کو محدود کرنے سے مزید تحقیق میں مدد ملے گی۔

زیادہ تر محققین کا کہنا ہے کہ کتے 15 ہزار سال سے انسانوں کے قریب ہیں۔ لیکن ان کی ابتدا اب بھی مبہم ہے۔

ڈاکٹر بوئکو کہتے ہیں کہ ’اس میں کوئی شک نہیں یہ انسانوں کے گرد رہتے رہے ہیں اور رفتہ رفتہ انسانی زندگی میں شامل ہوتے رہے ہیں۔ یہ سوال یہ ہے کہ ایسا ہونے کے لیے پہلا قدم کیا اٹھایا گیا۔‘

اسی بارے میں