ٹِم پیک بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر پہنچ گئے

تصویر کے کاپی رائٹ esa
Image caption تینوں خلابازوں کا استقبال خلائی سٹیشن کے موجودہ عملے نے کیا

برطانوی خلا باز ٹِم پیک روس اور امریکہ کے ایک ایک خلاباز کے ہمراہ بین اقوامی خلائی سٹیشن پر پہنچ گئے ہیں جہاں وہ چھ ماہ تک قیام کریں گے۔

برطانیہ کے سابق آرمی پائلٹ ٹِم پیک سویوز نامی خلائی راکٹ پر قزاقستان کے خلائی سٹیشن سے روس کے یوری مالینچینکو اور امریکہ کے ٹِم کوپرا کے ہمراہ خلائی سفر پر روانہ ہوئے تھے۔

بین الاقوامی خلائی سٹیشن کے چند حقائق

وہ خلا کا سرکاری طور پر سفر کرنے والے پہلے برطانوی خلا باز ہیں۔

ٹم پیک بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر چھ ماہ قیام کے دوران سائنسی تجربات کریں گے اور تعلیمی نوعیت کی سرگرمیوں میں حصہ لیں گے۔ ان کا مقصد نوجوانوں میں سائنسی شوق پیدا کرنا ہے۔

خلائی راکٹ کو برطانیہ کے معیاری وقت کے مطابق صبح 11:03 پر بیکانور کی سائٹ نمبر ایک سے لانچ کیا گیا۔ یہ وہ لانچنگ پیڈ ہے کہ جہاں سے یوری گیگارین نے سنہ 1961 میں پہلی خلائی پرواز کی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ٹِم پیک روس اور امریکہ کے ایک ایک خلاباز کے ہمراہ بین اقوامی خلائی سٹیشن پر پہنچے

یہ راکٹ چھ گھنٹے کے سفر کے بعد بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر پہنچا جہاں ان تینوں خلابازوں کا استقبال خلائی سٹیشن کے موجودہ عملے نے کیا۔

خلائی سٹیشن پر پہنچنے کے بعد اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے ٹم کا کہنا تھا کہ ’یہ شاندار سفر تھا۔ طلوعِ آفتاب کا منظر واقعی مسحور کن تھا۔‘

ٹم کو خلائی سٹیشن تک پہنچانے والا روسی راکٹ سٹیشن سے خودکار طریقے سے متصل ہونے میں ناکام رہا۔

اتصال کے خودکار نظام میں خرابی کے بعد راکٹ کے روسی کمانڈر نے اسے خلائی سٹیشن کی جانب لے جا کر راکٹ کو سٹیشن سے جوڑا۔

اسی بارے میں