زیکا وائرس میں ’خطرناک حد‘ تک اضافے کا خطرہ

مچھر تصویر کے کاپی رائٹ .
Image caption ماہرین کے مطابق مچھر کی افزائشِ نسل کے موسم میں جنسی تعلقات قائم کرنا وائرس میں اضافے کا سبب بن سکتا ہے

عالمی ادارہ صحت نے آئندہ چند مہینوں کے دوران دنیا کے مختلف حصوں میں زیکا وائرس میں خطرناک حد تک اضافے کے خطرے کا اظہار کیا ہے۔

عالمی ادارہ صحت کی اسسٹنٹ ڈائریکٹر جنرل میری پاؤلے کینی کا کہنا ہے کہ یورپ میں مچھر کی افزائش کے موسم کا آغاز ہوگیا ہے اور اِس دوران جنسی تعلقات قائم کرنا وائرس میں اضافہ کا سبب بن سکتا ہے۔

کینی پیرس میں بین الاقوامی سائنسی کانفرنس سے خطاب کررہی تھیں۔ اِس کانفرنس میں دنیا بھر سے چھ سو سے زائد ماہرین اور زیکا وائرس پر تحقیق کرنے والے افراد شامل ہیں۔

حال ہی میں سائنسی رسالے ای لائف میں شائع ہونے والے ایک تفصیلی نقشے کے مطابق دنیا میں تقریباً سوا دو ارب لوگ ایسے علاقوں میں آباد ہیں جہاں زیکا وائرس پھیلنے کا خدشہ موجود ہے۔

زیکا وائرس Aedes aegypti نامی اک خاص مچھر سے پھیلتا ہے اور اس برس یہ عالمی سطح پر ایک خطرناک وبا کی صورت میں سامنے آیا ہے۔

حالیہ تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ جن علاقوں میں زیکا وائرس کا خطرہ لاحق ہو سکتا ہے اس کی نقشہ بندی اتنی آسان نہیں تھی جتنا یہ بتانا آسان تھا کہ یہ مچھر کہاں پنپ سکتا ہے۔

محققین نے اس بات کی بھی تصدیق کی ہے کہ جنوبی امریکہ کا ایک بہت بڑا ایسا علاقہ اس سے زیادہ متاثر ہو سکتا ہے جو فی الوقت اس وائرس کے پھیلاؤ کے باعث توجہ کا مرکز ہے۔

اس میں کہا گيا ہے کہ تقریباً سوا دو ارب لوگ جو ان مذکورہ علاقوں میں رہتے ہیں انھیں اس وائرس سے خطرہ لاحق ہے۔

جن علاقوں میں اس وائرس کے پھیلنے کا خدشہ ہے اس میں جنوبی امریکہ کے طویل ساحلی علاقے اور وہ شہر شامل ہیں جو دریائے ایمازون کے آس پاس آباد ہیں۔

اسی بارے میں