کھٹملوں کو بعض رنگوں سے بیر

تصویر کے کاپی رائٹ SPL
Image caption کھٹمل رنگوں سے متاثر ہوتے ہیں

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ کھٹمل کو بعض رنگوں سے رغبت اور بعض سے منافرت ہے اور اس پریشان کن کیڑے سے نجات کے لیے ان کا استعمال کیاجا سکتا ہے۔

جرنل آف میڈیکل اینٹومولوجی میں شائع ایک تحقیق کے مطابق اس خون چوسنے والے جاندار کو سیاہ اور سرخ سے رغبت ہے جبکہ زرد (پیلے) اور سبز (ہرے) سے نفرت ہے۔

٭ جلد پر زیادہ بالوں سے کھٹمل کم کاٹتے ہیں

ان معلومات کی بنیاد پر انھیں بہت حد تک پھانسا اور پکڑا جا سکتا ہے۔

بہرحال امریکی تحقیق کرنے والے سائنسدانوں کا کہنا ابھی یہ کہنا قبل از وقت ہوگا کہ آیا زرد چادروں کے ذریعے انھیں بستر میں اپنے مسکن بنانے سے روکا جا سکتا ہے۔

کھٹمل چھوٹے جاندار ہیں اور وہ اپنی اگلی خوراک کے قریب رہنا چاہتے ہیں یعنی آپ کا خون چوسنے کے لیے آپ کے قریب۔ وہ آپ کی دری کے کوروں اور سلائیوں یا پھر آپ کے بستر یا چارپائی کے شگافوں میں چھپ سکتے ہیں۔ وہ دھات اور پلاسٹک کے مقابلے کپڑے اور لکڑیوں کو زیادہ پسند کرتے ہیں۔

Image caption کھٹمل خون چوسنے والا جاندار ہے اور یہ بستروں میں چھپا ہوتا ہے

لیکن ڈاکٹر کورین میک نیل اور ان کے ساتھیوں نے یہ پتہ چلانے کی کوشش کی ہے کہ آيا کھٹمل کے مسکن میں رنگوں کا کوئی اثر ہو سکتا ہے۔

انھوں نے اپنی تجربہ گاہ میں کئی طرح کے تجربات کیے اور انھیں مختلف قسم کی پلیٹوں میں مختلف رنگوں کے کارڈز کے ساتھ رکھا۔

کھٹملوں نے چھپنے کے لیے یونہی کوئی مقام نہیں چنا بلکہ انھوں نے رنگوں کا انتخاب کیا۔ انھوں نے سیاہ اور سرخ کو پسند کیا۔

ڈاکٹر نیل نے کہا: ’ہمارا خیال تھا کہ کھٹمل سرخ رنگ کو منتخب کریں گے کیونکہ خون لال ہوتا ہے اور وہ اس پر زندہ رہتے ہیں۔‘

’بہر حال ہم نے یہ پایا کہ لال رنگ انھوں نے اس لیے منتخب کیا کیونکہ وہ خود لال رنگ کے ہوتے ہیں اور وہ ایسے رنگ والی پناہ گاہ کی طرف بھاگے تاکہ وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ رہیں۔‘

Image caption دوسرے خون چوسنے والے چھوٹے جاندار کو بھی زرد اور سبز سے پرہیز ہے

محققین کا کہنا ہے کہ کھٹمل زرد اور سبز رنگوں سے بظاہر اس لیے متنفر نظر آئے کیونکہ وہ چکمدار ہوتے ہیں اور ان کے خیال میں چھپنے کے لیے زیادہ محفوظ نہیں۔

اس سے قبل کی جانے والی تحقیق میں بھی یہ بات سامنے آئی ہے کہ یہ دو رنگ خون چوسنے والے دوسرے جاندار مچھر اور سینڈفلائی یا ساحلی مکھی کو بھی ناپسند ہیں۔

ڈاکٹر نیل کہتے ہیں: ’میں لوگوں سے مذاقا کہتا ہوں کہ یاد سے زرد چادر رکھ لو لیکن حقیقت یہ ہے کہ ابھی یہ کہنا قبل از وقت ہے۔‘

اسی بارے میں