’ہر کسی کو وٹامن ڈی کے سپلیمنٹ استعمال کرنے چاہییں‘

تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption ایک سرکاری تخمینے کے مطابق انگلینڈ میں ہر پانچ میں سے ایک بالغ اور ہر چھ میں سے ایک بچے وٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہیں

انگلینڈ اور ویلز میں صحت کے حکام نے مشورہ دیا ہے کہ موسمِ سرما اور خزاں میں ہر کسی کو وٹامن ڈی کے سپلیمنٹ استعمال کرنا چاہییں۔

ایک سرکاری رپورٹ کے مطابق وٹامن ڈی کی مجوزہ یومیہ خوراک دس ملی گرام ہونی چاہیے۔ تاہم حکام کو تشویش ہے کہ ایسا صرف خوراک کے ذریعے ممکن نہیں ہے، خاص طور پر جب دھوپ کم ہو۔ دھوپ وٹامن ڈی کی پیداوار میں مدد دیتی ہے۔

٭ وٹامن ڈی بیمار دلوں کے لیے مفید

٭ وٹامن ڈی کی کمی سے ملٹی پل سکلیروسس کا خطرہ

وٹامن ڈی کی قلت سے ہڈیاں کمزور ہو سکتی ہیں اور بچوں کو رِکٹس کا مرض ہو سکتا ہے۔

وٹامن ڈی مچھلی کے تیل، انڈوں اور بعض قسم کے اناج میں پایا جاتا ہے۔ تاہم اکثر لوگوں میں وٹامن ڈی کا بڑا حصہ جلد پر دھوپ کے عمل سے بنتا ہے۔

ایک سرکاری تخمینے کے مطابق انگلینڈ میں ہر پانچ میں سے ایک بالغ اور ہر چھ میں سے ایک بچہ وٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption اکثر لوگوں میں وٹامن ڈی کا بڑا حصہ جلد پر دھوپ کے عمل سے بنتا ہے

اس کی روشنی میں سائنٹِفک ایڈوائزری کمیٹی آن نیوٹریشن نے تجویز کیا ہے کہ ایک سال سے زیادہ عمر والے ہر شخص کو ہڈیوں اور پٹھوں کی صحت برقرار رکھنے کے لیے یومیہ دس ملی گرام وٹامن ڈی استعمال کرنا چاہیے۔

صحت کے حکام کے مطابق سردیوں کے موسم میں اگر لوگوں کو یہ اندیشہ ہو کہ انھیں خوراک سے یہ دس ملی گرام نہیں مل پائیں گے تو انھیں وٹامن ڈی کے سپلیمنٹ استعمال کرنے چاہییں۔

یونیورسٹی آف مانچسٹر کے پروفیسر پیٹر سیلبی نے اس تجویز کا خیرمقدم کیا ہے۔ ’اس کی وجہ سے اب ہر کسی کو ہڈیوں کی بیماری اور انھیں ٹوٹنے سے بچانے کے لیے وٹامن ڈی استعمال کرنے کی تحریک ملے گی۔‘

ایسے لوگ جنھیں وٹامن ڈی کی کمی کا زیادہ خطرہ ہے، مثلاً حاملہ یا دودھ پلانے والی عورتوں یا 65 سال سے زیادہ عمر والے افراد، انھیں روزانہ سپلیمنٹ استعمال کرنے چاہییں۔

اس کے علاوہ وہ لوگ جو اپنی جلد ہمیشہ ڈھانپ کر رکھتے ہیں، انھیں بھی سارا سال سپلیمنٹ استعمال کرنے کا مشورہ دیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ سیاہ فام اور ایشیائی افراد کو بھی سارا سال سپلیمنٹ استعمال کرنا چاہیے۔

اسی بارے میں