انڈیا نے سکریم جیٹ راکٹ انجن کا ’کامیاب تجربہ‘ کر لیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 2008 میں انڈین سپیس ریسرچ آرگینائزیشن نے کامیابی سے ایک ہی مشن میں 10 سیٹیلائٹ لانچ کے تھے

انڈین سپیس ریسرچ آرگنائزیشن نے سکریم جیٹ راکٹ انجن کا کامیاب تجربہ کیا ہے، یہ راکٹ فضا میں موجودآکسیجن کا استعمال کرے گا جس سے اس پر آنے والی لاگت میں کمی ہوگی۔

خبررساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق یہ تجربہ اتوار کو ریاست آندھرا پردیش میں سری ہری کوٹہ کے خلائی مرکز میں کیا گیا۔

خلائی ادارے کے ایک اہلکار نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ ’پہلا تجربہ صبح چھ بجے سری ہری کوٹہ کے ستیش دھون سینٹر میں کیا گیا، جو کامیاب رہا۔‘

عام طور پر راکٹ انجن میں فیول اور آکیسڈائزر دونوں موجود ہوتے ہیں تاہم نئے تیار کیے گئے یہ انجن فضا میں موجود آکسیجن کا استعمال کریں گے جس سے ان کی لاگت میں کمی ہوگی۔

انڈین خلائی ادارے کا کہنا ہے اس سے راکٹ کے وزن میں بھی کمی ہوگی۔

انڈین صدر پرنب مکھرجی نے اس کامیاب تجربے میں انڈین سپیس ریسرچ آگنائزیشن کو مبارکباد دی ہے۔

ٹوئٹر پر ایک پیغام میں ان کا کہنا تھا کہ وہ خلائی ادارے کو سکریم جیٹ راکٹ انجن کے کامیاب تجربے پر مبارک باد دیتے ہیں اور انڈیا کو اس پر فخر ہے۔

خیال رہے کہ انڈیا خلائی مہمات کی اربوں ڈالر کی مارکیٹ میں ایک اہم ملک کے طور پر ابھر رہا ہے۔

اسی بارے میں