پنجاب میں کسانوں کےلیے 50 لاکھ سمارٹ فون

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption انڈیا اور کینیا جیسے ممالک میں بڑی تعداد میں کسانوں نے حال ہی میں سمارٹ فون ٹیکنالوجی کا استعمال شروع کیا ہے

پاکستان کے صوبہ پنجاب میں حکام کے مطابق کسانوں کو 50 لاکھ سمارٹ فونز دیےجائیں گے جس کا مقصد کسانوں کو کاشتکاری سے متعلق جدید ٹیکنالوجی کے بارے میں آگاہ کرنا ہے۔

پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے چیئرمین ڈاکٹر عمر سیف کا کہنا ہے کہ ’اکتوبر تک سمارٹ فونز مہیا کر دیے جائیں گے۔‘

سمارٹ فونز کے ذریعے ماہرین کے مشورے بھی دیے جائیں گے۔

پاکستان کے سرکاری خبررساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان کے مطابق ڈاکٹر عمر سیف نے کہا کہ ’کسان فصلوں میں کیڑے مار دوا کے استعمال سے متعلق بلامعاوضہ معلومات حاصل کریں گے۔‘

خیال رہے کہ انڈیا اور کینیا جیسے ممالک میں بڑی تعداد میں کسانوں نے حال ہی میں سمارٹ فون ٹیکنالوجی کا استعمال شروع کیا ہے۔

ڈنمارک کی آلبورگ یونیورسٹی کے ہیڈرک نوچے نے انڈیا میں ایسے ہی ایک منصوبے حصہ رہے تھے جس میں انھوں نے انڈیا کے کسانوں کے لیے سمارٹ فون کا ڈیزائن تیار کیا تھا، جو ناخواندہ افراد کے لیے بھی موزوں تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ پاکستان کی جانب سے یہ اقدام ’قابل تحسین‘ ہے لیکن ان کے تجربے کے مطابق صارفین کی جانب سے متعلقہ معلومات کے حصول میں مشکلات پیش آسکتی ہیں۔

انھوں نے بی بی سی کو بتاتا: ’بہت ساری ایسی معلومات جن میں کسانوں کی دلچسپی ہوتی ہے وہ اکثر دستیاب نہیں ہوتیں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’جیسا کہ ایک مقامی تاجر کے پاس اعلیٰ معیار کا سامان دستیاب ہے یا یہ ملاوٹ شدہ ہے۔‘

ڈاکٹر نوچے کا کہنا تھا کہ ان کے تجربے کے مطابق کسان نئے آلات کا بنیادی استعمال جلد ہی سیکھ سکتے ہیں اور یہ مستقبل میں ان کے لیے مفید ہوسکتا ہے۔

اسی بارے میں