سپین کے رافیل نڈال ایک مرتبہ پھر یو ایس اوپن کے فائنل میں پہنچ گئے

ٹینس تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption رافیل نڈال اپنے تیسرے یو ایس اوپن اور مجموعی طور پر سولہویں گرینڈ سلیم کے لیے اتوار کو میدان میں اتریں گے

ورلڈ نمبر ایک اور سپین کے سٹار کھلاڑی رافیل نڈال یو ایس اوپن ٹینس کے مردوں کے سنگلز کے فائنل میں پہنچ گئے ہیں۔

انھوں نے سیمی فائنل میں پہلا سیٹ 4-6 سے ہارنے کے بعد ارجنٹینا کے مارٹن ڈیل پوٹرو کو اگلے تین تین سیٹس میں 6-0 ،6-3 اور 6-2 شکست دی ہے۔

فائنل میں ان کا مقابلہ جنوبی افریقہ کے ٹینس کھلاڑی کیون اینڈرسن سے ہوگا جو کہ غیر متوقع طور پر فائنل میں پہنچے ہیں۔

کیون اینڈرسن سپین کے پابلو کیرینو بسٹا کو چار سیٹوں میں شکست دے کر فائنل میں پہنچے۔ ٹینس میں سنہ 1973 میں رینکنگ کی ابتدا کے بعد سے فائنل میں پہنچنے والے وہ سب سے کم درجے کے کھلاڑی ہیں۔ اس ٹورنا منٹ میں ان کی عالمی رینکنگ 32 ہے۔

٭ راجر فیڈرر: تاریخ کے بہترین ٹینس کھلاڑی

٭ رافیل نڈال ریکارڈ دسویں بار فرینچ اوپن کے فاتح

سپین کے سٹار کھلاڑی رافیل نڈال اس جیت کے بعد سال کے آخری گرینڈ سلیم میں یقینی فاتح کی صورت میں سامے آئے ہیں اور جیت کے ساتھ وہ اپنے 16واں گرینڈ سلیم کے حقدار ہو جائیں گے۔

اس سے قبل نڈال نے اگر کسی گرینڈ سلیم کے سیمی فائنل میں کسی سے شکست کھائی تھی تو وہ ڈیل پیٹرو ہی تھے لیکن یہ بات تقریبا آٹھ سال قبل یو ایس اوپن میں ہی پیش آئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جنوبی افریقہ کہ کیون اینڈرسن اپنا پہلا گرینڈ سلیم فائنل کھیلیں گے

کھیل کی ابتدا میں ایسا نظر آ رہا تھا کہ ایک بار پھر وہ اس اپ سیٹ کو دہرائیں گے لیکن پھر نڈال اپنے رنگ میں نظر آئے اور انھوں نے پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔

اینڈرسن کو نڈال کے خلاف سخت مشکل کا سامنا ہوگا کیونکہ نڈال اس ٹورنامنٹ میں وقت کے ساتھ فارم میں آتے نظر آ رہے ہیں۔

ابھی تک دونوں کے درمیان چار مقابلے ہوئے ہیں جن میں سے چاروں نڈال کے نام ہے۔

نڈال نے ڈیل پوٹرو کے خلاف میچ کے بعد کہا: 'پہلے سیٹ کے بعد میں نے بعض چیزوں میں بدلاؤ کیا۔ میں ان کے بیک ہینڈ کی جانب زیادہ کھیل رہا تھا پھر میں نے سوچا کہ مجھے ان کو زیادہ سے زیادہ حیرت میں ڈالوں کے وہ پہلے سے تعین نہ کرسکیں۔ میں نے بہت اچھی طرح سے یہ کام کیا اور میں خوش ہوں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈیل پیٹرو نے میچ کے بعد کہا کہ وہ اس میچ سے قبل بہت زیادہ تھک چکے تھے

دوسری جانب ڈیل پیٹرو نے کہا: ’میں تھک گیا ہوں۔ راجر فیڈرر کے خلاف اور تھیم میچ میں بالکل ہی تھک گیا تھا۔ اور مجھے اس دوران بخار بھی تھا۔ ‘

’اس میچ سے قبل بہت سی مشکلات کا سامنا تھا لیکن میں سیمی فائنل کو بہترین ڈھنگ سے کھیلنا چاہتا تھا۔ میرے خیال سے انھوں نے مجھ سے بہتر کھیل پیش کیا۔ وہ جیت کے حقدار تھے ۔ میں نے اپنی جانب سے پوری کوشش کی کہ یہ میچ بچا جاؤں لیکن میں نہیں بچا سکا۔‘

ہفتے کو کھیلے جانے والے خواتین کے فائنل میں امریکہ کی میڈیسن کیز کا سامنا اپنی ہم وطن سلون سٹیوینز سے ہوگا۔ دونوں خواتین کا یہ پہلا گرینڈ سلیم فائنل ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں