اپنے بولنگ ایکشن میں تبدیلی کے بعد اب 25 فیصد بولر بھی نہیں رہا: محمد حفیظ

محمد حفیظ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption محمد حفیظ کے بولنگ ایکشن کے مشکوک ہونے کے بارے میں پاکستان اور سری لنکا کے درمیان ابوظہبی میں کھیلے گئے تیسرے ون ڈے انٹرنیشنل کے امپائرز نے رپورٹ کی تھی

پاکستان کی کرکٹ ٹیم کے آل راؤنڈر محمد حفیظ کا کہنا ہے کہ اپنے بولنگ ایکشن میں تبدیلی کے بعد اب وہ 25 فیصد بولر بھی نہیں رہے ہیں لیکن انھیں یقین ہے کہ وہ اپنے بائیو مکینک ٹیسٹ میں کامیاب ہو جائیں گے۔

یاد رہے کہ محمد حفیظ کے بولنگ ایکشن کے مشکوک ہونے کے بارے میں پاکستان اور سری لنکا کے درمیان ابوظہبی میں کھیلے گئے تیسرے ون ڈے انٹرنیشنل کے امپائرز نے رپورٹ کی تھی۔

اس سیریز کے ریفری زمبابوے کے اینڈی پائی کرافٹ ہیں جو اس وقت بھی آئی سی سی کے میچ ریفری تھے جب تین سال قبل محمد حفیظ کا بولنگ ایکشن رپورٹ ہوا تھا۔

اسی بارے میں مزید پڑھیں

محمد حفیظ کے مشکوک بولنگ ایکشن کا بائیو مکنیک ٹیسٹ یکم نومبر کو ہو گا

محمد حفیظ کا بولنگ ایکشن ایک بار پھر مشکوک قرار

محمد حفیظ کا بولنگ ایکشن کلیئر

محمد حفیظ کا بولنگ ایکشن دوبارہ مشکوک

محمد حفیظ کے بولنگ ایکشن کا بائیو مکینک ٹیسٹ انگلینڈ کی لفبرا یونیورسٹی میں یکم نومبر کو ہوگا۔

دونوں بار ایک ہی میچ ریفری کی موجودگی میں اپنے بولنگ ایکشن پر رپورٹ ہونے کے بارے میں محمد حفیظ کا کہنا ہے کہ ان کے دماغ میں ایسی کوئی بات نہیں لیکن دکھ ضرور ہوتا ہے کہ جب آپ کے ساتھ ایسا کوئی سلسلہ منسلک ہو جائے۔

محمد حفیظ کے مطابق 'میں دس ماہ سے اسی تبدیل شدہ (ری ماڈل) بولنگ ایکشن کے ساتھ بولنگ کر رہا ہوں جس کا آغاز آسٹریلیا کے دورے سے ہوا اور پھر میں چیمپیئنز ٹرافی کھیلا۔ موجودہ سیریز کے صرف اس ایک میچ کے سوا جس میں میرے بولنگ ایکشن پر اعتراض ہوا کہیں بھی میرے بولنگ ایکشن کے ساتھ کوئی مسئلہ نہیں ہوا لہذا میں اب بھی یہی سمجھتا ہوں کہ میرے بولنگ ایکشن میں کوئی خرابی نہیں ہے۔ میں جو بھی بولنگ کر رہا ہوں وہ نیچرل ہے۔ ایسا ہرگز نہیں ہے کہ میں نے جان بوجھ کر کسی ایک گیند کے لیے کچھ کیا ہو۔'

انھوں نے کہا کہ وہ ہر سیشن کے بعد ٹیم کے وڈیو اینالسٹ کے ساتھ بیٹھ کر اپنی ایک ایک گیند کا جائزہ لیتے ہیں اور اپنی بولنگ پرسخت محنت کرتے ہیں۔

پاکستانی آل راؤنڈر کے مطابق انھیں پریشانی اس لیے ہوئی ہے کہ وہ اسی بولنگ ایکشن کے ساتھ کھیلتے چلے آئے ہیں۔ سری لنکا کے خلاف موجودہ سیریز میں ان کی بولنگ میں بہتری بھی نظر آئی لیکن ساتھ ہی یہ مشکل بھی پیش آ گئی تاہم انھیں امید ہے کہ وہ بائیو مکینک ٹیسٹ میں اپنا بولنگ ایکشن کلیئر کرانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں