شطرنج ٹورنامنٹ: اسرائیلی کھلاڑیوں کو سعودی ویزا نہ ملا

شطرنج تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

سعودی عرب میں ہونے والے شطرنج بین الاقوامی ٹورنامنٹ میں اس وقت تنازع کھڑا ہو گیا جب اسرائیلی کھلاڑیوں کو ویزا دینے سے انکار کر دیا گیا۔

سعودی حکام کا کہنا ہے کہ اسرائیلی کھلاڑیوں کو اس لیے ویزے نہیں دیے جا سکتے کیونکہ ان کے ملک کے اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات نہیں ہیں۔

اسرائیل چیس فیڈریشن کا کہنا ہے کہ وہ اس پر مالی ہرجانے کا مطالبہ کریں گے۔

سعودی عرب اور اسرائیل کی یہ بڑھتی قربت کیوں؟

ایران: اسرائیل سے دوستی ختم کریں، سعودی عرب سے مطالبہ

ایرانی فٹبالرز اور ’مٹھی بھر گندے ڈالر‘

شطرنج کے اس بڑے بین الاقوامی ٹورنامنٹ کی میزبانی کرنا سعودی عرب کے مستقبل کے منصوبوں میں سے ایک ہے۔

تاہم دو بار عالمی چیمپیئن یوکرین کی 27 سالہ انا میزیچک نے کہا ہے کہ وہ اس ٹورنامنٹ کا بائیکاٹ کریں گی کیونکہ وہ عبایہ نہیں پہننا چاہتیں۔ سعودی عرب میں عوامی مقامات پر خواتین کے لیے عبایہ پہننا لازمی شرط ہے۔

انا میزیچک کا کہنا ہے کہ ’ریکارڈ انعامی رقم کے باوجود میں ریاض میں نہیں کھیلوں گی۔ چاہے اس کی وجہ سے مجھے دو عالمی ٹائٹلز کھونا پڑیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption دو بار عالمی چیمپیئن یوکرین کی 27 سالہ انا میزیچک نے کہا ہے کہ وہ اس ٹورنامنٹ کا بائیکاٹ کریں گی۔

کنگ سلمان ورلڈ ریپڈ اینڈ بلٹز چیس چیمپیئن شپ کے اوپن ایونٹ کے لیے سات لاکھ 50 ہزار ڈالر اور خواتین کے ایونٹ کے لیے ڈھائی لاکھ ڈالر انعامی رقم رکھی گئی ہے۔

انا میزیچک نے رواں سال کے آغاز میں ایران کے دارالحکومت میں ہونے والی ورلڈ چیمپیئن شپ کا حوالہ دیتے ہوئے اپنے فیس بک پر لکھا کہ ’ہر عبایہ پہن کر اپنی زندگی کو خطرے میں ڈالنا ہے؟ ہر چیز کی ایک حد ہوتی ہے اور ایران میں حجاب پہننا کافی تھا۔‘

ورلڈ چیس فیڈریشن نے نومبر میں اعلان کیا تھا کہ ٹورنامنٹ کے آرگنائزرز اس بات پر متفق ہو گئے تھے کہ ’خواتین کھلاڑیوں کے لیے عبایہ پہن کر کھیلنے کی کوئی پابندی نہیں ہوگی۔‘

فیڈریشن کا کہنا تھا کہ ’یہ سعودی عرب میں ہونے والے کسی بھی کھیل میں پہلی بار ہوگا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں