فرنچائز کرکٹ میں کوچنگ آسان ہے: وقاریونس

وقار یونس تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان سپر لیگ میں اسلام آباد یونائٹڈ کے ساتھ کام کرنے کا تجربہ ان کے لیے اچھا رہا ہے: وقار

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے سابق ہیڈ کوچ وقار یونس کے خیال میں فرنچائز کرکٹ میں کوچنگ انٹرنیشنل کرکٹ کی کوچنگ کے مقابلے میں نسبتاً آسان ہے۔

وقاریونس پاکستان سپر لیگ میں اسلام آباد یونائٹڈ کے ڈائریکٹر کرکٹ اور بولنگ کوچ ہیں۔

وہ دو بار پاکستانی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ بھی رہ چکے ہیں۔

وقاریونس نے بی بی سی اردو کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ فرنچائز کرکٹ میں دباؤ کم ہوتا ہے۔

اس بارے میں مزید پڑھیے

مشورے کے بعد پاکستان جانے کا فیصلہ کروں گا: واٹسن

پی ایس ایل کیا کیا بیچے گی؟

’یہ کرکٹ نہیں کچھ اور ہی تھا‘

وقار یونس اسلام آباد یونائیٹڈ کے نئے ہیڈ کوچ

اس کرکٹ میں جو بھی غیرملکی کرکٹرز کھیلتے ہیں وہ ٹی ٹوئنٹی ہی کے مخصوص کھلاڑی ہوتے ہیں جو پوری دنیا میں کھیل رہے ہوتے ہیں اور انہیں خود بھی اپنے رول کا بخوبی اندازہ ہوتا ہے لہٰذا آپ کے لیے اس فرنچائز کرکٹ میں کوچنگ نسبتاً آسان ہو جاتی ہے۔

وقار یونس کا کہنا ہے کہ جب آپ پاکستان یا کسی بھی ملک کی کوچنگ انٹرنیشنل کرکٹ میں کرتے ہیں تو اس وقت آپ پر بہت زیادہ دباؤ ہوتا ہے جس میں پوری قوم کرکٹ بورڈ اور میڈیا غرض ہر طرف سے پریشر ہوتا ہے۔

وقار یونس کا کہنا ہے کہ پاکستان سپر لیگ میں اسلام آباد یونائٹڈ کے ساتھ کام کرنے کا تجربہ ان کے لیے اچھا رہا ہے اور وہ نوجوان کرکٹرز پر زیادہ وقت صرف کر رہے ہیں۔

وقار یونس پاکستان سپر لیگ کے علاوہ آئی پی ایل سری لنکن لیگ اور بنگلہ دیشی لیگ میں بھی کوچنگ کر چکے ہیں۔

وہ حالیہ ٹی ٹین لیگ میں بنگال ٹائیگرز کے کوچ تھے۔

وقار یونس کا کہنا ہے کہ ٹی ٹوئنٹی کے تناظر میں پاکستان سپر لیگ ایک اچھا ایونٹ ثابت ہوا ہے جس میں متعدد نئے باصلاحیت کرکٹرز سامنے آئے ہیں لیکن ٹیسٹ اور ون ڈے انٹرنیشنل کے لحاظ سے ہم دنیا کی دوسری ٹیموں سے پیچھے ہیں۔

وقار یونس کا کہنا ہے کہ ٹی ٹوئنٹی لیگز میں کھلاڑیوں کے ان فٹ ہونے کا خطرہ ہروقت موجود رہتا ہے کیونکہ یہ بہت تیز کرکٹ ہے تاہم فرنچائزز کے سکواڈز میں بڑی تعداد میں کھلاڑی موجود ہوتے ہیں لہٰذا ہر کھلاڑی کا متبادل موجود رہتا ہے اور یہ نئے کھلاڑیوں کے لیے بھی اچھا موقع ہوتا ہے کہ وہ اس سے فائدہ اٹھائیں اور اچھی کارکردگی دکھائیں۔

واضح رہے کہ اسلام آباد یونائٹڈ ان فٹ آندرے رسل کی خدمات سے محروم ہو چکی ہے جبکہ رومان رئیس بھی گھٹنے کی تکلیف میں مبتلا ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں