باکسر اینتھونی جوشوا کی نظر اب ڈبلیو بی سی ٹائٹل پر، وائلڈر کو للکار

اینتھونی جوشوا تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اینتھونی جوشوا میچ کے بعد فتح کا جشن مناتے ہوئے

برطانوی باکسر اینتھونی جوشوا نے سنیچر کی رات باکسنگ کا ڈبلیو بی او ورلڈ ہیوی ویٹ ٹائٹل بھی اپنی باکسنگ کی بیلٹ میں ڈال لیا۔ ان کے پاس ڈبلیو بی اے اور آئی بی ایف کے ٹائٹل پہلے ہی ہیں۔

انھوں نے گذشتہ رات برطانیہ کے شہر کارڈف میں 80 ہزار تماشائیوں کے سامنے نیوزی لینڈ کے جوزف پارکر کو شکست دی۔ انھوں نے میچ کے بعد کہا کہ وہ اس جیت کو اپنے اگلے میچ پر حاوی نہیں ہونے دیں گے۔

'میں خوش ہوں، کیونکہ میں کامیابی کو اپنے سر پر سوار نہیں کرتا، اور میں ہمیشہ سوچتا ہوں کہ ہمیں جلد ہی دوبارہ یہ کرنا ہے۔ اگر میں بلندی پر ریٹائر ہوں، تو میں کہوں گا کہ ہاں میں ہی وہ مرد ہوں۔ کیونکہ آپ بلندی پر ہی ریٹائر ہوں۔ لیکن مجھے چند ماہ بعد اپنے 'تخت' کا دفاع کرنا ہے، سو میں ایک طرح سے توازن میں ہوں اور ہم ابھی بھی سرگرم ہیں۔ سو ہاں، ہماری نظریں اب اگلے (میچ پر) ہیں۔ ہمیں اگلی جاب کے لیے تیار رہنا ہے۔'

جوشوا کو یقین ہے کہ وہ ڈبلیو بی سی بیلٹ جیت سکتے ہیں اور اس طرح ان کے پاس باکسنگ کے چاروں بڑے ٹائٹل ہوں گے۔ تاہم ان کا کہنا ہے کہ ان کے لیے زیاہ اہم ہے کہ وہ اس کھیل میں کس طرح مزید بہتری لاتے ہیں۔

اپنے میچ کے بعد اینتھونی جوشوا نے سکائی سپورٹس سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 'یہ باکسنگ کی حکمتِ عملی کا ثبوت تھا، میں اپنے الفاظ پہ قائم رہا ہوں۔ مجھے معلوم ہے کہ چیمپیئن بننا کیا ہے۔ جوزف پارکر نے کہا تھا کہ وہ جنگ چاہتے ہیں، لیکن یہ سب کچھ باکسنگ کی نفاست کے متعلق تھا۔ جو اہم چیز ہمیں نہیں بھولنی چاہیے وہ یہ ہے کہ میں متحدہ عالمی ہیوی ویٹ چیمپئن ہوں۔'

'مجھے وائلڈر چاہیئے۔ یا فیوری۔ اسے (وائلڈر کو) رنگ میں لائیں اور میں اسے ادھ موا کر دوں گا۔'

جوشوا کے پروموٹر بیری ہیرن کے مطابق اینتھونی جوشوا اور ڈیونتے وائلڈر کے درمیان ورلڈ ہیوی ویٹ ٹائٹل کے میچ کے متعلق مذاکرات اگلے ہفتے سے شروع ہو سکتے ہیں۔

ہیرن نے کہا کہ 'یہ لڑائی اینتھونی جوشوا واقعی چاہتے ہیں اور میرے خیال میں وہ یہ اس سال چاہتے ہیں۔'

جوزف پارکر نے میچ کے بعد کہا کہ 'وہ (اینتھونی جوشوا) ایک اچھے جوان مرد ہیں اور وہ اس دن بہتر کھیلے۔ ہم دوبارہ واپس آئیں گے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں