دوسرا ٹی ٹوئنٹی: ویسٹ انڈیز کو 82 رنز سے شکست، پاکستان نے سیریز جیت لی

بابر تصویر کے کاپی رائٹ AFP

کراچی میں پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے مابین دوسرے ٹی ٹوئنٹی میں پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو 82 رنز سے شکست دے دی ہے۔

ویسٹ انڈیز 206 رنز کے ہدف کے تعاقب میں 19.2 اوورز میں 123 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی۔

پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔ پاکستان نے مقررہ 20 اوورز میں تین وکٹوں کے نقصان پر 205 رنز سکور کیے۔

تفصیلی سکور کارڈ

ویسٹ انڈیز کی بیٹنگ

پاکستان کو پہلی کامیابی تیسرے اوور میں نواز نے دلوائی جب فلیچر کو ایک رن کے انفرادی سکور پر آؤٹ کر دیا۔

والٹن اور مارلن سیمیولز نے ٹیم کو سنبھالا اور دوسری وکٹ کی شراکت میں 39 رنز سکور کیے۔

والٹن نے جارحانہ بیٹنگ کی اور 29 گیندوں میں پانچ چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 40 رنز سکور کیے۔ ان کو شاداب نے بولڈ کیا۔

شاداب نے پاکستان کو جلد ہی ایک اور کامیابی دلوائی جب انھوں نے سیمیولز کو 12 رنز پر آؤٹ کیا۔

ویسٹ انڈیز کے آؤٹ ہونے والے چوتھے کھلاڑی رام دین تھے جو 21 رنز بنا سکے۔ ان کو حسین طلعت نے آؤٹ کیا۔

پاکستان نے پانچویں وکٹ 94 کے مجموعی سکور پر حاصل کی جب کپتان جیسن محمد صرف 15 رنز بنا کر محمد عامر کی گیند پر بولڈ ہوئے۔

ویسٹ انڈیز کی چھٹی وکٹ اس وقت گری جب پاول صرف تین رنز بنا کر محمد عامر کی گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔ یہ عامر کی دوسری وکٹ تھی۔

محمد عامر نے تیسری وکٹ پال کو 17 رنز کے انفرادی سکور پر آؤٹ کر کے لی۔

ویسٹ انڈیز کا قسمت بھی ساتھ نہیں دے رہی۔ ایمرٹ اور ولیمز کے درمیان دوسرے رن پر کنفیوژن اور ایمرٹ رن آؤٹ ہو گئے۔

حسن علی کو بھی اپنی پہلی وکٹ ٹی اینڈر آؤٹ کر کے ملی جب انھوں نے ولیمز کو بولڈ کیا۔

پاکستان کی جانب سے ویسٹ انڈیز کی آخری وکٹ حسین طلعت نے لی جب انھوں نے سمتھ کو چھ رنز پر آؤٹ کیا۔

بابر اور طلعت کی عمدہ بیٹنگ

اس سے قبل پاکستان کی جانب سے بابر اعظم اور حسین طلعت نے شاندار بیٹنگ کا مظاہرہ کیا۔

پاکستانی اننگز کی نمایاں بات بابر اعظم اور حسین طلعت کی 119 رنز کی دوسری وکٹ کی شراکت تھی۔

ویسٹ انڈیز نے پہلے ٹی ٹوئنٹی کے مقابلے میں آغاز اچھا کیا لیکن اس کے بعد بابر اعظم اور حسین طلعت کی جارحانہ بیٹنگ کے سامنے بے بس رہے۔

یہ چوتھا موقع ہے کہ پاکستانی ٹیم نے ٹی ٹوئنٹی میں 180 رنز سے زیادہ سکور کیا ہے۔

ویسٹ انڈیز کی فیلڈنگ بھی کافی غیر معیاری تھی۔

بابر اعظم نے 58 گیندوں میں 13 چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 97 رنز بنائے اور ناٹ آؤٹ رہے۔

پہلے میچ کے مردِ میدان حسین طلعت نے ایک بار پھر جارحانہ بلے بازی کی اور 41 گیندوں میں آٹھ چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 63 رنز بنائے۔

پاکستان کو پہلا نقصان جلد ہی اٹھانا پڑا جب فخر زمان چھ رنز بنا کر ایمرٹ کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوئے۔ حسین طلعت کو سمتھ نے آؤٹ کیا۔

ویسٹ انڈیز کی مشکلات میں مزید اضافہ فاسٹ بولر ویراسامی پرمال کی چوٹ کی صورت میں ہوا ہے جو آج کے میچ سمیت اس سیریز میں مزید حصہ نہیں لے سکیں گے۔

گذشتہ روز کراچی میں نو سال کے بعد ہونے والے پہلے بین الاقوامی مقابلے میں پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو 143 کی بھاری شکست سے دوچار کیا تھا۔

یہ رنز کے اعتبار سے پاکستان کی سب سے بڑی جیت، پاکستان کا مشترکہ سب سے بڑا سکور اور ویسٹ انڈیز کا کم از کم سکور بھی تھا جو محض 60 رنز پر ڈھیر ہو گئی تھی۔

اس میچ کے دوران پرمال صرف تین گیندیں کروانے کے بعد ٹخنہ مڑ جانے کے باعث میدان سے باہر چلے گئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پہلے میچ کے مردِ میدان حسین طلعت نے ایک بار پھر جارحانہ بلے بازی کی اور 41 گیندوں میں آٹھ چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 63 رنز بنائے

میچ کے بعد سوال اٹھا تھا کہ ویسٹ انڈیز سے طویل پرواز کے بعد سکواڈ صبح تین بجے کراچی پہنچا تھا، جس کے بعد اسے صرف 15 گھنٹے بعد ہی دنیا کی نمبر ایک ٹی20 ٹیم کے سامنے ہزاروں تماشائیوں کی موجودگی میں میچ کیوں کھلایا گیا؟

شاید اس کی وجہ سکیورٹی رہی ہو گی کہ پاکستانی حکام جلد از جلد یہ سیریز نمٹا کر اپنے سر سے بوجھ اتارنا چاہتے ہیں، لیکن اس کا خمیازہ ویسٹ انڈیز کو بھگتنا پڑا ہے۔

دوسری طرف کنٹریکٹ اور شیڈیولنگ کے مسائل کی وجہ سے ویسٹ انڈیز کے کئی سٹار کھلاڑی اس منی سیریز میں حصہ نہیں لے رہے، جس نے رہی سہی کسر پوری کر دی ہے۔

میچ کے بعد ویسٹ انڈیز کے نئے کپتان جیسن محمد نے کہا تھا کہ ہمیں ہر شعبے میں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنا ہو گا لیکن گذشتہ رات کے شو کے بعد امکان اس کا امکان کم ہی نظر آتا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں